New Age Islam
Thu May 19 2022, 10:28 AM

Urdu Section ( 2 Feb 2022, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Lashkar-e-Taiba Is Only An Unofficial Militant Wing Of The Government Of Pakistan لشکر طیبہ حکومت پاکستان کا صرف ایک غیر سرکاری عسکری ونگ ہے

 لشکر طیبہ ایک ایسی تنظیم ہے جو پاکستانی حکومت اور اس کی فوج کے مقاصد کو پورا کرتی ہے

اہم نکات:

سروے سے پتہ چلتا ہے کہ لشکر طیبہ اہل حدیث سے متاثر ہے

سروے سے معلوم ہوتا ہے کہ کسی بھی پاکستانی نے لشکر طیبہ کی مذمت نہیں کی

پاکستانی، لشکر طیبہ کی ہندوستان مخالف بیان بازی کی وجہ سے حمایت کرتے ہیں۔

پاکستان میں ہندوستان کے خلاف بولنے والے کو محب وطن سمجھا جاتا ہے۔

 -----

 نیو ایج اسلام اسٹاف رائٹر

25 جنوری 2022

File photo of Lashkar-e-Taiba founder Hafiz Muhammad Saeed | Youtube

-----

کرسٹین فیئر اور ان کے ساتھی کارل کالٹینتھلر نے تقریباً سات ہزار پاکستانیوں پر ایک سروے کیا اور ان سے پوچھا کہ وہ لشکر طیبہ کی حمایت کیوں کرتے ہیں۔ چند ہزار پاکستانیوں کے درمیان کیے گئے اس سروے سے لشکر طیبہ نامی دہشت گرد تنظیم کے ایک اہم پہلو کا پتہ چلتا ہے۔ اس سے شاید پہلی بار یہ معلوم ہوتا ہے کہ اسے نہ صرف دیوبندی تکفیریت بلکہ اہل حدیث کہلانے والے  فرقے سے بھی تحریک ملتی ہے۔ لیکن ایک پہلو جسے محققین نے نظر انداز کیا ہے وہ یہ ہے کہ لشکر طیبہ پاکستان میں اپنی نظریاتی تشریح یا اہل حدیثی نظریے کی بنیاد پر حکومت کے قیام کے لیے کام کرنے والی کوئی تنظیم نہیں ہے۔ اس نے کھل کر کبھی اپنے نظریاتی میلان کا اظہار نہیں کیا ہے۔

دراصل، لشکر طیبہ اور اس کی مادر تنظیم جماعت الدعوہ، حکومت پاکستان کا صرف ایک عسکری ونگ ہے اس لئے کہ کیونکہ حکومت پاکستان مریدکے میں اپنے ہیڈکوارٹر میں تعمیراتی اور ترمیمی کام کے لیے ٹینڈر نکالنے والی ہے۔ یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ ممبئی دہشت گردانہ حملوں میں لشکر طیبہ کا ہاتھ ثابت ہو چکا ہے۔ پاکستان کا اردو اخبار لشکر طیبہ سے اپنی وابستگی نہیں چھپاتا۔ لہٰذا پاکستان میں لشکر طیبہ کو ایک ایسی تنظیم کے طور پر جانا جاتا ہے جو ضرورت پڑنے پر پاکستانی حکومت اور فوج کے مقصد کو پورا کرتی ہے۔ اس لیے وہ پاکستان کے اندر فرقہ وارانہ اور نظریاتی بنیادوں پر کسی قسم کا تشدد نہیں کرتا۔

درحقیقت پاکستان میں سیاسی طاقت کے حصول کا سب سے طاقتور ہتھیار مذہب ہے۔ اس لیے مذہبی اور انتہا پسند تنظیم کا مالک ہونے پر کسی دوسرے ملک کے برعکس، اس کے سربراہ کو کوئی خطرہ لاحق نہیں ہے۔حافظ سعید کی بھارت کے خلاف گاہے بگاہے طنز و مزاح کی بنیاد پر، انہیں پاکستان کی عوام اور حکومت دونوں کی نظر میں عمومی ہمدردی حاصل ہے۔ چونکہ پاکستان کی حکومت ایغوروں کے مسئلے کو اٹھا کر چین کی مخالفت نہیں کرنا چاہتی، اس لیے سعید نے ایغوروں پر ظلم و ستم کے معاملے پر چین کے خلاف ایک لفظ بھی نہیں کہا۔

اس سے کوئی بہت زیادہ فرق نہیں پڑتا پاکستان کی کوئی تنظیم دیوبندی نظریہ یا داعش کی آئیڈیالوجی سے وابستہ ہے یا کسی اہل حدیثی یا بریلوی مسلک سے اس کا تعلق ہے، کیونکہ آخر کار یہ سب کے سب ملک کے اندر یا ملک سے باہر تشدد کی ہی باتیں کرتے ہیں۔ ہو سکتا ہے  کچھ تنظیمیں کم تشدد پسند ہوں اور کچھ زیادہ، لیکن پاکستان میں کوئی بھی تنظیم یہ نہیں کہتی کہ تشدد مسائل کا حل نہیں ہے۔ اسلام کے اندر اقلیتیں یا فرقے ہمیشہ اکثریتی طبقے کے ظلم و ستم کا شکار ہوتے رہتے ہیں۔

یہ سروے پاکستانی ذہنیت کو بھی ظاہر کرتا ہے جو کہ پاکستان کے اندر اقلیتوں اور دیگر فرقوں سے تعلق رکھنے والے افراد کے خلاف ایک بیمار ذہنیت کا حامل ہے۔ اس سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ تقریباً تمام پاکستانی کسی نہ کسی وجہ سے لشکر طیبہ کی حمایت کرتے ہیں۔ کسی پاکستانی نے یہ نہیں کہا کہ وہ لشکر طیبہ کی حمایت نہیں کرتا یا وہ لشکر طیبہ کے دہشت گردانہ نظریے یا فرقہ وارانہ نظریے کی مذمت کرتا ہے۔ پاکستان میں حالات ایسے بن چکے ہیں کہ وہاں کی میڈیا، علمائے کرام اور عام لوگوں میں بھی اپنے ملک کی دہشت گرد اور عسکری تنظیموں کے خلاف آواز اٹھانے کی ہمت نہیں ہے۔

 ہم نے پوچھا کہ پاکستانی لشکر طیبہ کی حمایت کیوں کرتے ہیں، نتائج آپ کو حیران کر دیں گے

کرسٹین فیئر

24 جنوری 2022

 جیش محمد اور لشکر طیبہ پاکستان کی سب سے زیادہ خطرناک جماعت ہے۔ یہ بھارت، افغانستان، بنگلہ دیش اور ممکنہ طور پر دنیا کے کسی اور گوشے میں کام کرنے والا سب سے مؤثر اور سفاک دہشت گرد گروپ ہے۔ یہ سمجھنا کہ کون اس مذموم تنظیم کی حمایت کرتا ہے ایک اہم علمی اور پالیسی تجزیاتی سوال ہے۔ جس بنیاد پر پاکستانی اس گروپ کی حمایت کرتے ہیں اس پر روشنی ڈالنے کے لیے میرے ساتھی کارل کالٹینتھلر اور میں نے ملک کے چاروں صوبوں پنجاب، سندھ، بلوچستان اور خیبر پختونخوا میں 7,656 پاکستانیوں کا ایک قومی سطح پر سروے کیا۔ اس کے نتائج آپ کو حیران کر سکتے ہیں۔

نظریاتی معاملات

لشکر طیبہ (اور ایسے دیگر مختلف عنوان جو انہوں نے استعمال کیے ہیں اور استعمال کرتے ہیں) خطے میں کام کرنے والے بہت سے اسلام پسند دہشت گرد گروہوں سے مختلف ہے جو دیوبندی فرقے سے تعلق رکھتے ہیں، جس میں لشکر طیبہ اہلِ حدیث سے تعلق رکھتی ہے۔ درحقیقت، اس تنظیم کا ان دیوبندی گروہوں کے ساتھ کافی تنازعہ ہے کیونکہ زیادہ تر دیوبندی تکفیری یا پاکستانیوں کو غیر مسلم قرار دینے والے ہوتے ہیں، جس سے وہ جان لیوا تشدد کا شکار ہو جاتے ہیں۔ مزید برآں، پاکستان میں اسلامک اسٹیٹ دیوبندی عسکریت پسند تنظیموں سے تعلق رکھتی ہے کیونکہ دیوبندی جن مدارس اور دہشت گرد تنظیموں کی حمایت کرتے ہیں وہ سخت فرقہ وارانہ ہیں جن کی گزشتہ دہائی میں غیر مسلموں، شیعہ، احمدی اور بریلویوں کو نشانہ بنانے کی ایک بھرپور تاریخ ہے۔

سب سے بڑی بات ہے کہ پاکستانی حکومت لشکر طیبہ کی قدر کرتی ہے کیونکہ یہ ملک کے اندر عدم تشدد کی بات کرتی ہے۔ یہ تنظیم احمدیوں کے لیے موت کی کھلے عام وکالت بھی نہیں کرتی، جس کی وجہ سے یہ تنظیم پاکستان کے دیوبندیوں اور یہاں تک کہ بریلویوں سے بھی بالکل ممتاز نظر آتی ہے، جو احمدیوں کو کفر  (ارتداد) کا بدترین مرتکب مانتے ہیں۔ مزید یہ کہ لشکر کا خیال ہے کہ وہ پاکستان میں اسلامک اسٹیٹ کا ایک واحد نظریاتی حریف ہے۔

تنظیم کے اہلحدیث ہونے کے دعوے کے باوجود، پاکستان کے زیادہ تر اہلحدیث علمائے کرام اور ادارے لشکر کے اس بنیادی دعوے کو مسترد کرتے ہیں کہ عسکری جہاد  تمام مسلمانوں کا ایک اہم فریضہ ہے اور اسے صرف غیر ریاستی عناصر ہی انجام دے سکتے ہیں۔ اس کے بجائے، زیادہ تر اہلحدیث علماء کا خیال ہے کہ صرف اسلامی ریاست (اسلامی ریاست) ہی جہاد کر سکتی ہے۔ اگرچہ لشکر طیبہ ہر اس شخص کے خلاف عدم تشدد کی تبلیغ کرتی ہے جو اللہ کی حاکمیت کو تسلیم کرتا ہے، اس کے پاکستان میں تقریباً تمام دیگر مسلم فرقوں کے ساتھ حقیقی نظریاتی اختلافات ہیں۔ اس کا بریلویوں (ممکنہ طور پر پاکستان سب سے بڑے فرقے) پر الزام ہے کہ وہ بت پرستی کا ارتکاب کرتے ہیں کیونکہ وہ پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم کی عبادت کرتے ہیں، جو کہ اسلام کے مطابق محض ایک انسان تھے۔ بریلوی نہ صرف نبی کے لیے ایسی صفات بیان کرتے ہیں جو صرف اللہ کے لیے مخصوص ہیں، بلکہ وہ تعویذ پہنتے ہیں، پیروں سے عقیدت و استمداد ،  اور ان کی قبروں پر عمارت تعمیر بھی کرتے ہیں، جن کو لشکر ارتداد مانتا ہے۔

لشکر کا دیوبندی عسکریت پسند گروہوں کی طرح شیعوں کے ساتھ بھی تنازعہ ہے کیونکہ وہ پیغمبر کی جانشینی کو مسترد کرتے ہیں۔ دیوبندیوں کے برعکس، جو یہ سمجھتے ہیں کہ شیعہ واجب القتل ہیں، مارے جانے کے لائق ہیں، لشکر کا خیال ہے کہ انہیں تعلیم یافتہ کرنا اور مسلمان بنانا چاہیے۔

پاکستان میں مرکزی دھارے کے اہلحدیث اداروں کے ساتھ نمایاں نظریاتی اختلافات کے باوجود، ہمارے مطالعے کے مطابق، لشکر طیبہ کو اب بھی اہلحدیث کے پیروکاروں کی حمایت حاصل ہے۔ خاص طور پر، ہم دیکھتے ہیں کہ بریلوی، شیعہ، اور دیوبندی اس تنظیم کی مخالفت کرتے ہیں، جو کہ لشکر طیبہ کی تبلیغی کوششوں (دعوۃ و تبلیغ) سے مطابقت رکھتی ہے تاکہ ایسے افراد کو لشکر کی اہلحدیثی تفہیم  کا قائل کیا جا سکے۔

لیکن نسلی امتیاز کی اہمیت زیادہ ہے

لشکر طویل عرصے سے کشمیری تنظیم ہونے کا دعویٰ کرتی رہی ہے، جو کہ کشمیریوں کے لیے لڑنے والے اور کشمیر میں مرنے والے کشمیریوں پر مشتمل ہے۔ لیکن یہ طویل عرصے سے مشتبہ رہا ہے اور حالیہ اعداد و شمار کسی حد تک یہ ظاہر کرتے ہیں کہ صرف مؤخر الذکر دعویٰ درست ہے (تصویر 1 دیکھیں)۔ تقریباً 90 فیصد ہندوستان میں مرتے ہیں، اور اس کے 90 فیصد سے زیادہ افراد پاکستان کے پنجاب کے محض دس اضلاع سے آتے ہیں۔ صرف ایک فیصد پاکستانی مقبوضہ کشمیر سے آتے ہیں۔ لشکر طیبہ کے "کشمیری" تنظیم ہونے کے دعوے سے قطع نظر، یہ ہر طرح سے ایک پنجابی تنظیم ہے۔

اس سے ایک دلچسپ سوال پیدا ہوتا ہے: کیا پاکستانی اس تنظیم کی مذہبی یا نسلی بنیادوں پر حمایت کرتے ہیں؟ معلوم یہ ہوتا ہے کہ اگرچہ نظریہ اہمیت رکھتا ہے لیکن نسلی شناخت حمایت کی سب سے مضبوط وجہ ہے۔ یہ نظریہ سے کہیں زیادہ اہم ہے۔ ساتھ ہی ساتھ، بلوچوں میں لشکر طیبہ کی مخالفت کا امکان دوسروں کے مقابلے میں نمایاں طور پر زیادہ ہے جب کہ سندھیوں کا ردعمل کمزور ہے۔ زمینی حقائق سے بھی یہی پتہ چلتا ہے: پاکستانی حکومت نے بلوچستان میں لشکر کو مختلف وجوہات کی بنا پر استعمال کیا ہے۔

اولا، امید یہ کی جاتی ہے کہ لشکر بلوچوں کو اپنی نسل پرستانہ خواہشات کو ترک کرنے اور لشکر کی طرف سے پیش کیے گئے اسلام کے ریاستی حمایت شدہ تصورات کو اپنانے پر آمادہ کر سکتا ہے۔ اس ایجنڈے کو آگے بڑھانے کے لیے، جب قدرتی آفات بلوچستان میں آتی ہیں تو پاکستان صرف ان "انسان دوست" تنظیموں کو ہی امدادی کام کرنے دیتا ہے جن کا تعلق لشکر سے ہے۔ یہ بھی اہم بات ہے کہ لشکر واضح طور پر چین کا حامی ہے اور چین پاکستان اقتصادی راہداری (CPEC) کی حمایت کرتا ہے۔ یہ دیکھتے ہوئے کہ پاکستان وسائل سے مالا مال صوبے کو چینی استحصال کے لیے محفوظ بنانے کے لیے آخری بلوچ تک سے لڑے گا، بلوچ بجا طور پر لشکر کو پنجابی تسلط والی فوج کے ساتھ مل کر کام کرنے والے پنجابی تسلط کا ہی ایک اور روپ سمجھتے ہیں، جس کے بارے میں بہت سے بلوچوں کا خیال ہے اس نے بلوچوں کا اپنے ہی صوبے میں برا حال کر رکھا ہے۔

پاکستان میں فوج کی زیر قیادت صورت حال کی حمایت

ایک طرف تو لشکر بیرون ملک ایک اہم اور پرتشدد خلل انداز ہے، جبکہ یہ پاکستان میں اندرون ملک، یہ واضح طور پر جمود کی طاقت ہے۔ ایک طرف تو لشکر طیبہ ہندوستان میں کفار کو قتل کرنے کی وکالت کرتی ہے جبکہ یہی تنظیم  پاکستان کے اندر، سماجی خدمات، انسانی امداد اور متقی مسلمانوں کی زندہ مثالوں کے ذریعے انہیں مسلمان بنانے پر اصرار کرتی ہے۔ لشکر طیبہ کی فرقہ وارانہ تشدد کی سخت مخالفت اسے اسلامک اسٹیٹ اور بہت سے دیگر دیوبندی عسکریت پسند گروپوں سے مختلف بناتی ہے، مثلاً شیعہ مخالف لشکر جھنگوی (ایل ای جے، جو سپاہ صحابہ پاکستان کے ناموں سے بھی کام کرتی ہے اور اہل سنت و جماعت یا تحریک طالبان یا پاکستانی طالبان)، جو اپنے بہت سے کمانڈر اور کیڈر کو لشکر جھنگوی سے حاصل کرتے ہیں ہے۔

مزید برآں، لشکر ریاست کے کسی بھی قسم کے احتجاج کے خلاف آواز بلند کرتا ہے—خواہ اس کی قیادت کوئی بھی ہو—اور پاکستان کے موجودہ ملکی، سیاسی اور اقتصادی نظام کا سخت حامی ہے، جس میں چین کے ساتھ پاکستان کی ناقابل برداشت دوستی بھی شامل ہے۔ شاید یہ حیرت کی بات نہ ہو کہ لشکر کی حمایت کا تیسرا سب سے مضبوط محرک جمود سے اطمینان ہے۔ ہمارے نتائج ایسی کسی بھی سوچ کو ختم کر دیتے ہیں کہ لشکر ایک انقلابی تنظیم ہے۔

حیوانیت کی مائیں

اگرچہ یہ واضح کرنے کے لیے بہت کم کام کیا گیا ہے کہ آیا خواتین اسلام پسند دہشت گردی کی حمایت کرتی ہیں یا نہیں، لیکن زیادہ امکان اس بات کا ہے کہ پاکستان میں لشکر کی حمایت مردوں کے مقابلے خواتین زیادہ کرتی ہوں۔ یہ تنظیم خواتین کو تنظیم میں بھرتی کرنے کے لیے کافی وسائل وقف کرتی ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ وہ اپنے بیٹوں اور خاندان کے دیگر مرد افراد کو عسکریت پسندوں کے طور پر یا معاون کے طور پر لشکر میں شامل ہونے کی ترغیب دے کر لشکر طیبہ کی حمایت کریں۔

لشکر طیبہ خواتین کو تنظیم کے مسلک کو فروغ دینے کا اختیار دیتا ہے، جو انھیں بااختیار بناتی ہے اور انھیں بغیر کسی رکاوٹ کے آگے بڑھنے کے لیے آزادی فراہم کرتی ہے۔ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ مائیں تنظیم سے مایوس نہ ہوں، لشکر طیبہ کو ہر اس مشن کے لیے ماں جیسی نعمت کی ضرورت ہوتی ہے جس میں اس کا بیٹا نام نہاد شہادت حاصل کر سکے۔ یہ تنظیم اپنے بیٹوں کی موت سے والدین کو مطلع کرنے کے لیے سینئر اہلکاروں کو روانہ کرتی ہے اور لاش کی غیر موجودگی میں اہم غائب جنازہ یا نماز جنازہ کی نگرانی کرتی ہے۔

اس میں سے کوئی بھی اچھی خبر نہیں ہے

تو ان معلومات کا کیا فائدہ ہے؟ یہ نتائج یہ ظاہر کرتے ہیں کہ لشکر طیبہ سے نمٹنے کے لیے اس بات کا بہت امکان ہے کہ کوئی قابل عمل غیر متحرک حکمت عملی موجود ہے۔ بڑے پیمانے پر تنظیم کے لئے حکومت کی حمایت اور پاکستان کی فوج اور انٹیلی جنس ایجنسیوں کی ملک میں مضبوط پکڑ کے پیش نظر، ایسی معلوماتی کارروائیاں کرنے کی بہت کم گنجائش ہے جو ہمیں ملنے والے تعاون کے کسی بھی ذرائع کو نقصان پہنچا سکتی ہے۔

لشکر طیبہ کو روکنے کا واحد راستہ - کھلے عام فوجی کارروائیوں کے ذریعے فیصلہ انداز میں پاکستان پر ہندوستان کی مرضی مسلط کرنے کی صلاحیتوں کی عدم موجودگی - خفیہ اور متحرک ہیں۔ جیسا کہ میں نے کہیں اور دکھایا ہے، پاکستان میں اہرامی اور کھلی قیادت کا ڈھانچہ اسے قیادت کے خاتمے کا خطرہ بناتا  ہے۔ اگرچہ یہ راستہ چیلنجنگ ہے اور اسے عمل میں لانا مشکل ہے،  لیکن دوسرے راستے مضحکہ خیز معلوم ہوتے ہیں۔

English Article: Lashkar-e-Taiba Is Only An Unofficial Militant Wing Of The Government Of Pakistan

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/lashkar-e-taiba-militant-wing-pakistan/d/126290

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..