New Age Islam
Sun Sep 20 2020, 11:23 PM

Urdu Section ( 10 Sept 2011, NewAgeIslam.Com)

System and Message نظام اور پیغام

By Maulana Khalid Saifullah Rahmani

(Translated from Urdu by Arman Neyazi, NewAgeIslam.com)

A major conference of great scholars and representatives of Islamic world was held in Mecca Mokarrama on 14th Zil Hij, 28th of May 1962 where a proposal to establish an organisation “Ra’abta Alam e Islami” was accepted. Thus the organisation, ‘Ra’abta Alam e Islami’ came in to being in 1965 with objectives of Dawa’ah, introduction of Islam, bringing the Believers on the right path and preaching of ‘Wahdat”. This organisation is highly respected not only in the Islamic but in the rest of the world as well. It has its representatives in UNESCO and UNICEF. This organisation attends various UN’s conferences as an observer. Its wings like ‘Al Majlis ul Aala ul Aalami ul Masajid’(Estd. 1395 Hijri) and Al Majma ul Fiqhi ul Islami (Estd. 1398 Hijri) are some of the main wings established for the basic objective of maintaining  contact with the world.

This organisation is respected and taken in high stead because of its great services in the field of Da’wah (invitation towards Islam), Milli and Education among the Muslims all over the world. One of its main objectives is to invite Ulema and Islamic scholars from all over the world on one platform and discuss the problems faced by the Islamic world to bring out a solution.

During the last some months there have been agitations, demonstrations and revolutions in Islamic world especially in the Arab world which has almost got successful in Egypt, Tunisia and Libya and is close to success in Yemen. In Syria the struggle for independence is being suppressed by the government there. In such a scenario there was a need to converge on one platform and take stock of the situation as per Islamic teachings to pronounce right guidance to the Muslim rulers and the Muslim masses which could be helpful in establishing peace and solidarity all over the Islamic world. Thus, Ra’abta organised a world conference in Mecca Mokarrama from 22nd to 24th Sha’aban1432 Hijri, dated 23rd to 25th of July 2011 on the topic “Al Alam ul Islami----Mushkilaat wal Hulool” (Islamic World: Problems and Solutions).

Representatives for Saudi countries were in great number and other than that, representatives from Muslim minority countries like India, America, Britain, Japan, China and South Africa were also there. From India other than yours truly there were Syed Jalaluddin Ansar Umri (Ameer e Jama’t Islami Hind), Maulana Suleman Husain Nadvi (Ustaad Dau ul Uloom Nadwat ul Ulema, Lucknow) and some scholars from Kerala. Maulana Sanaullah Quasmi (ETV, Urdu) was also present as an invitee from Hyderabad as a representative of ‘Eblagh’. It was a matter of great pride and satisfaction that there were many Ulema of Indian origin representing different other countries, Maulana Badrul Hasan Quasmi (Vice President, Islamic Fiqh Academy, India) was one such important person in that category.

Various Study Papers were presented. Yours truly presented a study on “Al Firqua w annaza’at ul Ta’fia w Isteqlal ul Aada i Leha” (Inter Sectarianism Differences among Umma and Its Extraction by the Enemies of Islam). Yours truly has tried to discuss the reason behind religious, sectarian, regional and political differences and their solution. I have requested the governments specially the Muslim ones not to use religion as a weapon in political differences. Very few Research Papers were selected for discussion and it being a discussion on the Islamic world, scholars of Muslim countries were provided an opportunity to read their papers.

In the opening session Quari and highly respected Imam of Jeddah orator Dr. Abdullah Basfar recited Quran in his beautiful voice and Dr. Fatahi Khalieel Muhammad Governor of Sudan addressed the conference a a Guest Speaker. Dr. Abdullah bin Abdul Hasan Turky Secretary of Ra’abta delivered the welcome address and highlighted the subject of the conference. Mufti e Azam Shaikh Abdul Aziz of Saudi Arab delivered the key address.

In the concluding session of this conference Khadim Haraman Sharifain Shah Abdullah was to address the conference but on his behalf Governor of Mecca Mokarrama Shaikh Khalid ul Faisal addressed the gathering. Thus this opening session was held on 22nd Sha’ban from Zuhar to Asr.

Seven sessions were held on the different sides of the topic and were presided over by Hamid Hasan (Deeni Islamic Bank) Dr. Saleh bin Abdullah bin Hameed (Chief Justice Saudi Arab), Shaikh Mohammad Ahmad Husain (Mufti Aazam Palestine), Dr. Wahabba Zaheeli (Syria) Shaikh Muhammad Hasan Wudu (Moritania), Dr. Muhammad Usman Saleh (Sudan), Dr. Muhammad Ahmad Loh (Senegal) and Dr. Ahmad Muhammad Haleel (Chief Justice Urdun).

Shaikh Abdul Fattah Moro of Tunisia said, “It is sad that Muslims have forgotten the form of Ummah and have accepted regionalism when the relationship between the Muslims is Deen and not land.” He also commented that there are innumerable book of Fiqh but only a few on the Islamic political management hence it is needed that we work in this regard and a set of Islamic Laws should be addressed. He said, “It does not suit to a respectable society to use everything from an aeroplane to a needle manufactured by the people of other communities industry and technology. Hence, it is a duty of the Islamic countries to obtain modern technology for their use.”

Almost all the Papers were an example of deep study and farsightedness.

Maulana Muhammad Taqui Usmani, member of Ra’abta Fiqh Acedemy got to speak for only ten minutes but during his speech he highlighted the role of Wali, Ameer and masses. He said masses have a right to criticise the government but there is a difference between criticism and humiliation.

As Maulana Usmai’s and other many scholar’s papers had described the ‘obedience of Ameer’ and evidences from “Atiullah w Ati ur Rasool w Ulal Amr” were noted down, Maulana Syed Suleman Husaini Nadwi spoke on the point and said ‘God has ordered to “obey the Ameers among you”, it means Muslims have been ordered to obey those government heads who are Muslims. But at present almost all the government heads of Islamic nations have got out of the boundaries of Islam. They are ‘deniers’ of Islamic Shariah. They implement restrictions on Muslim women and are agents of the enemies of Islam and are not Muslims representatives. How can such people be obeyed?’

Abdullah Moru’s address and Maulana Nadwi’s point was supported in a way as if it was the voice of the majority of the people there.

Ra’abta Alam e Islami’s mouthpiece ‘Al Alam e Islami’ kept getting published every day during the seminar and special papers kept getting special attention in it. Thus in 23rd July issue, Maulana Badrul Hasan Quasmi’s and in the 24th July issue excerpts of yours truly write up got published.

The concluding session of the conference was held on 25th July evening from 9 to 10 o’clock. It was presided over by Mufti Azam Saudi Arab. It was addressed by well known educationist and Dawwah personality Dr. Abdullah Ma’atooque. Farewell speech was delivered which was accepted with some small changes. Shaikh Abdullah Abdul Hasan Turky described the proposals in short and gave the happy news that with the order of Khadim Haramain Sharifain this conference will be held every year and all the respected guests will be its permanent invitees. The conference was declared closed after a short speech of Mufti Azam Shaikh Abdul Azeez al Shaikh.

During the conference a meeting with the King of Saudi Arabia was also organised and yours truly was also among the forty selected for the occasion. But I preferred staying in Masjid e Haram as I had not got the opportunity of going to Masjid e Haraam again after being blessed with Umrah. I was told Shah expressed his happiness and satisfaction for the conference.

Two hundred twenty two scholars from 76 countries including Asia, Europe, America, Africa and Australia participated in the conference.

The thing to be noted is that Respected Dr. Rahmatullah Enayatullah Ahmad who belongs to Maulana Rahmatullah Keeranwi (RA)’s family organised the conference with much aplomb and addressed every necessity of every participant with full satisfaction of the participants.

“Fa Jazaullah Khair ul Jazaa”

URL: https://newageislam.com/urdu-section/system-and-message--نظام-اور-پیغام/d/5457

مولانا خالد سیف اللہ رحمانی

رابطہ عالم اسلامی کی مکہ مکرمہ کانفرنس

14؍ذی الحجہ 1381ھ مطابق 28مئی 1962کو مکہ مکرمہ میں عالم اسلام کی نمائندہ شخصیتوں کی ایک بڑی کانفرنس منعقد ہوئی، اس کانفرنس میں عالم اسلام کی نمائندہ شخصیتوں نے شرکت کی، کانفرنس میں رابطہ عالم اسلامی کے قیام کے سلسلہ میں تجویز منظور ہوئی، چنانچہ 1965میں باضابطہ اس ادارہ کا قیام عمل میں آیا، جس کا بنیادی مقصد و حدت امت کو روبعل لانا اور اسلام کا تعارف ودعوت کی جد وجہد کرنا ہے، یہ ادارہ نہ صرف عالم اسلام میں بلکہ عالمی سطح پر وقعت کی نظر دیکھا جاتا ہے، اقوام متحدہ کے ادارہ یونیسکو اور یونیسف میں بھی اس کی نمائندگی ہے اور اقوام متحدہ کی مختلف ذیلی مجلسوں میں مشاہد کی حیثیت سے اس کی شرکت ہوتی ہے، اس کے مختلف شعبے رابطہ کے مقاصد و اہداف کو پورا کرنے کے لئے قائم ہیں، جن میں ’’المجلس الا علی العالمی للمساجد‘‘(قائم شدہ: 1395ھ) اور ’’المجمع الفقہی الا سلامی ‘‘(قائم شدہ:1398ھ) خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔

رابطہ کو اس کی عظیم دعوتی ، علمی اور ملی خدمات کی وجہ سے پوری دنیا کے مسلمانوں میں قبولیت اور پذیرائی حاصل ہے، اس ادارہ کی خدمات کا ایک اہم پہلو یہ ہے کہ یہ عالم اسلام اور امت مسلمہ کو درپیش اہم مسائل پر غور و فکر کے لئے پوری دنیا سے علما ، اور دانشور وں کا طلب کرتا ،تبالہ خیال کا موقع فراہم کرتا اور ان مسائل کو حل کرنے کی کوشش کرتا ہے، چنانچہ گذشتہ چند مہینوں کے درمیان عالم اسلام اور خصوصاً عالم عرب میں حکومتوں کے خلاف احتجاج اور مظاہروں کا سلسلہ شروع ہوا،جو تیونس ، مصر اور لیبیا میں کامیابی سے ہمکنار ہوچکا ہے، یمن میں کامیابی کے قریب ہے اور انصاف و آزادی کے حصول کی ایسی ہی کوشش شام میں حکومت کی سفا کی اور ظلم و جورکاشکار ہے، اس پس منظر میں ضرورت تھی کہ اسلامی نقطۂ نظر سے ان حالات کا جائزہ لیا جائے اور مسلمان حکمرانوں کو اور عوام کو ایسے مشورے دیئے جائیں ، جو شریعت اسلامی کے مطابق بھی ہوں اور امن و آشتی کے قیام میں معاون بھی ، چنانچہ رابطہ 22تا24شعبان 1432ھ مطابق 23تا25جولائی 2011کو مکہ مکرمہ میں ایک عالمی کانفرنس منعقد کی، جس کا عنوان تھا’’العالم الا سلامی المشکلات والحلول‘‘(عالم اسلام ۔دشواریاں اور حل)۔اس سیمینا رمیں مسلم اور عرب ملکوں کی تو خاصی نمائندگی تھی ہی، مسلم اقلیتی ممالک ۔۔۔ہندوستان ، امریکہ ، برطانیہ ، جاپان ، چین، جنوبی افریقہ وغیرہ۔۔۔کے نمائندے بھی شریک تھے، ہندوستان سے اس حقیر کے علاوہ مولانا سید جلال الدین انصر عمری(امیر جماعت اسلامی ہند) ، مولانا سید سلمان حسینی ندوی(استاذ دارالعلوم ندوۃ العماء لکھنؤ) اور کیرالا کے بعض مندوبین بھی شریک تھے، حیدر آباد سے ابلاغ کے نمائندہ کی حیثیت سے عزیزی مولانا ثناء اللہ قاسمی (ای، ٹی ،وی، اردو) بھی مدعوین میں شامل تھے، خوشی کی بات ہے کہ دنیا کے مختلف ممالک سے ان ممالک کی نمائندگی کرتے ہوئے متعدد ہندوستان نژاد علماء و اہل دانش نے شرکت کی، جن میں کویت سے مولانا بدرالحسن قاسمی (نائب صدر اسلامک فقہ اکیڈمی انڈیا)خصوصیت سے قابل ذکر ہیں، مقالات کی تعداد تو زیادہ تھی، اس حقیر کا مقالہ’’الفرقۃ و المنزاعات الطانفیۃواستغلال الا عداء لہا‘‘(امت مسلمہ میں فرقہ وارانہ اختلافات اور اعداء اسلام کی طرف سے اس کا استحصال )تھا، اس حقیر نے اپنی تحریر میں مذہبی ، نسلی، علاقائی اور سیاسی بنیادوں پر اختلافات کے اسباب اور ان کا حل پیش کرنے کی کوشش کی ہے اور خاص طور پر مسلم حکومتوں سے درخواست کی ہے کہ سیاسی اختلافات کے لئے مذہب کو آلہ کار نہ بنایا جائے، لیکن چند مقامات ہی نشستوں میں پڑھنے کے لئے منتخب کئے گئے ، چونکہ اصل بحث عالم اسلام کی تھی، اس لئے مسلم ممالک کے مقالہ نگاروں کو ہی پیشکش کا موقع دیا گیا۔

افتتاحی نشست میں خوش لحان قاری اور جدہ کے مقبول امام و خطیب ڈاکٹر عبداللہ ھفر نے تلافت کی ، ڈاکٹر فتحی خلیل محمد گورنر شمالی ریاست سوڈان نے بحیثیت مہمان خطاب کیا، رابطہ کے سکریٹری جنرل ڈاکٹر عبداللہ بن عبدالمحسن ترکی نے خیر مقدمی کلمات کہے اور کانفرنس کے موضوع کی وضاحت کی اور سعودی عرب کے مفتی اعظم شیخ عبد العزیز آل الشیخ نے کلیدی خطبہ دیا، اس نشست کے اختتام پر خادم حرمین شریفین شاہ عبداللہ کا خطاب ہونا تھا ، لیکن ان کی طرف سے مکہ مکرمہ کے گورنر شیخ خالد الفیصل نے اپنے موضوع پر مغز خطبہ دیا، اس طرح 22شعبان کو بعد ظہر تا عصر یہ افتتاحی نشست منعقد ہوئی، اس کے بعد موضوع کے مختلف پہلوؤں پر سات نشستیں منعقد ہوئیں، ڈاکٹر حسان حامد حسن (دبئی اسلامک بینک) ڈاکٹر صالح بن عبداللہ بن حمید( چیف جسٹس سعودی عرب) شیخ محمد احمد حسین (مفتی اعظم فلسطین) ڈاکٹر وہبہ زحیلی (شام) شیخ محمد حسن ددو(موریطانیہ) ڈاکٹر محمد عثمان صالح( سوڈان) ڈاکٹر محمد احمد لوح( سینگال) ڈاکٹر احمد محمد ھلیل (چیف جسٹس اردن) نے اس نشستوں کی صدارت کی ،پہلی نشست میں شیخ عبدالفتاح مورو (تیونس) نے اسلامی حمیت سے معمور خطاب کیا اور بنیادی باتوں کی طرف توجہ دلائی، انہوں نے کہا افسوس ہے کہ مسلمانوں میں امت ہونے کا تصور ختم ہوگیا ہے، اور علاقائیت کو مسلمانوں نے اپنا لیا ہے، حالانکہ مسلمانوں کے لئے باہمی رشتہ کی بنیاد دین ہے نہ کہ زمین ، آپ نے اس بات پر افسوس ظاہر کیا کہ ہمارے فقہی ذخیرہ میں عبادات پر تو بے شمار کتابیں ہیں، لیکن اسلام کے نظام سیاست پر محض دوچار کتابیں ہیں، اس لئے ضرورت ہے کہ اسلام کے سیاسی نظام پر کام ہو اور باضابطہ ’محمود قوانین‘ مرتب ہو، انہوں نے کہا کہ کسی باعزت قوم کو یہ بات زیبا نہیں کہ اس کی آنکھوں پر جو عینک ہو ، اس کے جسم پر جو پوشاک ہو اور سواری کے لئے جو گاڑی میسر ہو، ان کے بشمول سوئی سے لے کر جہاز تک دوسری قوموں کی صنعت و ٹکنالوی کی محتاج ہو، اس لئے مسلم ممالک کا فریضہ ہے کہ وہ جدید ٹکنالوجی کو حاصل کرنے کی کوشش کریں، شیخ تیونس کے مشہور اسلامی مفکر و مصنف ہیں اور چالیس سال تک ایک اسلامی داعی ومفکر ہونے کے جرم میں جیل کی سزا کاٹ چکے ہیں۔

پیش کئے جانے والے تقریباً سبھی مقالات گہری فکر اور علمی بصیرت کا مظہر تھے، مولانا محمد تقی عثمانی۔جو رابطہ کی فقہ اکیڈمی کے ممبر بھی ہیں۔کا مقالہ بھی پسند کیا گیا، اگر چہ انہیں صرف دس منٹ کا وقت ملا اور وہ کچھ منتخب اقتباسات ہی سنا پائے ، ان کی تحریر کی یہ بات قابل ذکر ہے کہ انہوں نے شورائی نظام پر توجہ دلائی، ولی امر اور رعایا کے حقوق بیان کئے یہ بتایا کہ رعایا کو حکومت پر تنقید کرنے کا حق حاصل ہے، البتہ تنقید اور اہانت میں فرق ہے ، چونکہ مولانا عثمانی اور متعدد مقالہ نگار وں کی تحریر میں باربار اطاعت امیر کی بات کہی گئی تھی اور اللہ تعالیٰ کے ارشاد ‘‘اطیعواللہ واطیعواالرسول واولی الامر منکم’’ سے استدلال کیا تھا،اس لئے مولانا سید سلمان حسینی ندوی نے مناقشہ میں گرم جوش حصہ لیتے ہوئے یہ نکتہ اٹھایا کہ اللہ تعالیٰ نے ‘‘تم میں امراء’’ کی اطاعت کا حکم دیا ہے، یعنی ایسے حکمراں ہیں،وہ عمومی طور پر دائرہ اسلام سے باہر نکل چکے ہیں، وہ احکام شریعت کے منکر ہیں ، مسلمات دین پر پابندی لگاتے ہیں اور مسلمانوں کے نمائندہ ہونے کے بجائے اعداء اسلام کے ایجنٹ ہیں، ایسے لوگوں کی اطاعت کیوں کر کی جاسکتی ہے؟ عبدا لفتاح مورد کے خطاب اور مولانا ندوی کی اس تعلق پر لوگوں نے کچھ اس طرح تحسین و آفرین کے کلمات کہے کہ گویا یہ اکثر حاضرین کے دل کی آواز تھی۔ سیمینار کے درمیان روز کاروز رابطہ عالم اسلامی کے ترجمان ‘‘العالم اسلامی’’ کی خصوصی اشاعت بھی عمل میں آتی رہی،جس میں سیمینار میں آنے والے اہم مقالات کے اقتباسات نمایاں طور پر شائع کئے جاتے تھے، چنانچہ 23جولائی کے شمارے میں مولانا بدرالحسن قاسمی کی تحریر کے اقتباسات شائع ہوا اور 24جولائی کے شمارہ میں مولانا محمد تقی عثمانی اور اس حقیر کی تحریر کے منتخب اقتباسات شائع کئے گئے۔ سیمینار کی اختتامی نشست 25جولائی کو شام 9تا 10بجے منعقد ہوئی، جس کی صدارت مفتی اعظم سعودی عرب نے کی،سعودی عرب کی اہم علمی ودعوتی شخصیت ڈاکٹر عبداللہ معتوق نے خطاب کیا، اختتامی بیان پیش کیا گیا، جو کچھ لفظی ترمیمات کے ساتھ منظور ہوا، شیخ عبداللہ عبدالمحسن ترکی نے تجاویز کی مختصر وضاحت کی اور خوشخبری سنائی کہ خادم حرمین شریفین نے حکم دیا ہے کہ یہ اجلاس ہر سال منعقد کیاجائے اور آپ سبھی حضرات اس کے مستقل شرکاء ہوں گے، اخیر میں مفتی اعظم شیخ عبدالعزیز آل شیخ کے مختصر خطاب پر کانفرنس اختتام پذیر ہوئی، کانفرنس کے درمیان ایک وقت شاہ عبداللہ سے ملاقات کا بھی رکھا گیا تھا، جس کے لئے تمام مہمانوں کو جدہ لے جایا گیا، اس ملاقات کے لئے چالیس منتخب مندوبین ہی کے نام رکھے گئے تھے، جس میں اس حقیر کا نام بھی شامل تھا، لیکن چونکہ کانفرنس کی نشستوں کے تسلسل کی وجہ سے عمرہ کی سعادت حاصل کرنے کے بعد دوبارہ مسجد حرام جانے کا موقع نہیں ملا تھا، اس لئے میں نے مسجد حرام میں وقت گذارنے کو جدہ جانے پر ترجیح دی، معلوم ہوا کہ اس ملاقات میں شاہ نے کانفرنس سے متعلق اچھے تاثرات کا اظہار فرمایا، کانفرنس میں بحیثیت مجموعی ایشیا ، یورپ، امریکہ، افریقہ اور آسٹریلیا کے 76ملکوں سے 222افراد شریک ہوئے، یہ بات قابل ذکر ہے کہ رابطہ کے شعبہ کانفرنس کے ذمہ دار محترم ڈاکٹر رحمت اللہ عنایت اللہ احمد ہندوستان کے معروف مصنف ، عالم، صاحب نسبت بزرگ اور تقابل ادیان کے ماہر مولانا رحمت اللہ کیرانویؒ (بانی مدرسہ صولتیہ مکہ مکرمہ) کے خانوادہ کے چشم و چراغ ہیں، انہوں نے نہایت خوش سلیقگی اور انتظامی مہارت کے ساتھ اپنی ذمہ داریاں انجام دیں اور تمام مہمانوں کے ساتھ خوش اخلاقی اور کشادہ چشمی سے پیش آتے رہے، فجزاہ اللہ خیر الجزاء۔

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/system-and-message--نظام-اور-پیغام/d/5457

 

Loading..

Loading..