New Age Islam
Mon Sep 28 2020, 06:12 PM

Urdu Section ( 23 Oct 2013, NewAgeIslam.Com)

Reality of Wahhabism وہابیت کی اصلیت

 

خورشید انور

9 ستمبر ، 2013

اگرچہ پہلے بھی دہشت گردی پر کوئی بحث یا بات چیت عام لوگوں کے دماغ کو براہ راست اسلام کی طرف کھینچ لے جاتی تھی۔ لیکن عالمی تجارتی مرکز پر حملے اور اس کے بعد دو نعروں ' دہشت گردی کے خلاف جنگ ' اور ' دو تہذیبوں کے درمیان ٹکراؤ ' نے ایسی ذہنیت بنائی کہ دنیا بھر میں عام انسانوں کے درمیان ایک خطرناک خیال پیٹھ بنانے لگا کہ ' سارے مسلمان دہشت گرد ہوتے ہیں ". کچھ ' نرم دل ' رعایت برتتے ہوئے اسے ہر دہشت گرد مسلمان ہوتا ہے ' کہنے لگے۔ تھی تو یہ سیاسی سازش ہے، لیکن عام لوگ ہر مسئلے کی تہہ میں جا کر تحقیقات کرکے سمجھنے کی کوشش کرے  یہ ممکن نہیں۔ اور اقدار ان پرتھوپی جاتی ہیں۔ جسے ' اسلامی دہشت گردی ' کہا گیا، وہ دراصل ہے کیا؟ یہ دہشت گردی واقعی اسلامی ہے یا کچھ اور ؟ اگر اسلام ہی ہے تو اس کی جڑیں کہاں ہیں ؟ اس حقیقت کا انکشاف کرنے کے لئے ایک لفظ کا ذکر اور اس کا مقصد سمجھ کر ہی آگے کی بات کی جا سکتی ہے : ' جہاد ' ! آخر جہاد ہے کیا؟ اس کی پیدائش کہاں سے ہوئی اور ارادے کیا تھا؟

جہاد کی قرآن میں پہلی ہی تشریح ' جہاد القاعدہ - نفس ' یعنی خود کی برائیوں کے خلاف جنگ ہے۔

جب ایسا ہے تو پھر اچانک وہ جہاد کہاں سے آیا جو انسانوں کا ، یہاں تک کہ معصوم بچوں کا خون بہانا اسلام کا حصہ بن گیا۔ دنیا بھر میں ' اسلامی ' دہشت گردی کا خطرہ منڈلانے لگا۔ پر کہاں سے آیا یہ خطرہ ؟

اسلام جیسے - جیسے پروان چڑھا، دیگر مذاہب کی طرح اس کے بھی فرقے بنتے گئے۔ ایک طور طریقہ اسلام کا شروع سے ہی رہا اور وہ تھا سیاسی اسلام۔ ظاہر ہے کہ اقتدار کے لئے نہ جانے کتنی جنگ لڑی گئی اور خود محمد نے جنگ بدر لڑی۔ آسانی سے کہا جا سکتا ہے کہ یہ جنگ بھی مذہب کو توسیع دینے کے لئے لڑی گئی۔ مگر اصلی مقصد تھا اقتدار اور اسلامی اقتدار ۔ جنگ بدر میں سب کچھ ویسا ہی ہوا جیسا کسی جنگ میں ہوتا ہے، پر جہاد کی قرآن میں دی گئی تعریف پھر بھی جوں کے توں رہی۔ سال 1299 میں سیاسی اسلام نے پہلا بڑا قدم اٹھایا اور اٹومن سلطنت یا سلطنت  عثمانیہ قائم ہوئی۔ ( 1299-1922 ). عام خیال ہے کہ یہ جہاد کے نام پر ہوا، صرف منگڑھت ہے۔ اقتدار کی بھوک اس کی اہم وجہ تھی۔

جہاد کی نئی تعریف گڑھی اٹھارهوی صدی میں محمد بن عبد الوہاب نے، جس کے نام سے اسلام نے ایک نیا موڑ لیا، جس میں جہاد اپنے مسخ شکل میں سامنے آیا۔ نجت میں پیدا ہوئے اسی محمد بن عبدالوہاب (1703-1792) سے چلنے والا سلسلہ آج وہابی اسلام کہلاتا ہے، جو ساری دنیا کو آگ اور خون میں ڈبو دینا چاہتا ہے۔

محمد بن عبدالوہاب کے آنے سے بہت پہلے صوفی سلسلہ محبت کا پیغام دینے اور انسانوں کو انسانوں سے جوڑنے کے لئے آ چکا تھا۔اس کا پھیلاؤ بہت تیزی سے ترکی، ایران، عرب اور جنوبی ایشیا میں ہو چکا تھا۔ صوفی سلسلے سے جو رسم جڑ گئے وہ الگ مسئلہ ہے، مگر حقیقت ہے کہ صوفی سلسلے نے اسلام کو بالکل نیا طول و عرض دے دیا اور وہ تعصب کی زنجیرے توڑتا ہوا اسلام کی حدیں بھی پار کر گیا۔

سلطنت  عثمانیہ سے لے کر فارس اور عرب تک صوفی سلسلو نے جو دو انتہائی اہم کام انجام دئے وہ تھے غلام رکھنے کی روایت ختم کرنا اور عورت کے نجات کا دروازہ کھولنا ۔

فارس میں مولانا رومی کے پیروکاروں کی طرف سے میولیا سلسلے نے تیرہویں صدی میں عورتوں کے لئے یہ صوفی سلسلے کے دروازے نہ صرف کھولے بلکہ ان کو برابر کا درجہ دیا۔ اس کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ وجد طاری کرنے والےصوفیوں کے موسیقی سےبھرےرقص  میں مرد اور خواتین کی برابر حصہ داری ہونے لگی۔ مولانا رومی کی خاص شاگردہ فخرالنسا تھی۔ ان کا رتبہ اتنا تھا کہ ان کے مرنے کے سات سو سال بعد میولیا سلسلے کے اس وقت کے سربراہ شیخ سلیمان نے اپنی نگرانی میں ان کا مقبرہ بنوایا۔

عظیم صوفی شیخ ابن العربی (1165-1240) خود صوفی خاتون فاطمہ بنت ابن المتھنّاکے شاگرد تھے۔ شیخ ابن العربی نے خود اپنے ہاتھوں سے فاطمہ بنت  ابن المتھنّا کے لئے جھونپڑی تیار کی تھی، جس میں انہوں نے زندگی بسر کی اور وہیں دم توڑا۔

محمد ابن عبدالوہاب نے ایک - ایک کر اسلام میں تیار ہوتی خوبصورت اور ترقی پسند روایات کو تباہ کرنا شروع کیا اور اسے اتنا تنگ کر دیا کہ اس میں کسی طرح کی آزادی، كھلےپن ، رواداری اور باہمی میل جول کی گنجائش ہی نہ رہے۔ قرآن اور حدیث سے باہر جو بھی ہے اس کو نیست و نابود کرنے کا بیڑا اس نے اٹھایا۔ اب تک کا اسلام کئی شاخوں میں بٹ چکا تھا۔ احمدیہ فرقہ عبدالوہاب کے کافی بعد انیسویں صدی میں آیا لیکن شیعہ، حنفی ، ملائیکی، صفی ، جعفریا ، باكريا ، بشريا ، خلفیا حنبلی ، جاهری ، اشری ، منتجلی ، مرجيا ، متردی ، اسماعیلی ، بوہرا جیسی کئی عقائد نے اسلام کے اندر رہتے ہوئے اپنی الگ شناخت بنا لی تھی اور ان کی شناخت کو اسلامی دائرے میں منظوری باقاعدہ بنی ہوئی تھی۔

ان کے علاوہ صوفی مت تو دنیا بھر میں پھیل ہی چکا تھا اور زیادہ تر شناخت صوفی مت سے رشتہ بھی بنائے ہوئے تھیں۔ لیکن محمد بن عبدلوہاب کی آمد اور اثرات نے ان تمام پہچانوں پر تلوار اٹھا لی۔ ' مختصر سیرت الرسول ' نام سے اپنی کتاب میں خود محمد بن عبدالوہاب نے لکھا ' جو کسی قبر، مزار کے سامنے عبادت کرے یا اللہ کے علاوہ کسی اور سے رشتہ رکھے وہ مشرک ( توحید مخالف ) ہے اور ہر مشرک کا خون بہانا اور ان کی املاک ہڑپنا حلال اور جائز ہے۔

یہیں سے شروع ہوا محمد ابن  عبدالوہاب کا اصلی جہاد، جس نے چھ سو لوگوں کی ایک فوج تیار کی اور ہر طرف گھوڑے دوڑا دیے۔ تمام طرح کی اسلامی عقائد کے لوگوں کو اس نے موت کے گھاٹ اتارنا شروع کیا۔ صرف اور صرف اپنے نظریات کا تشہیر کرتا رہا اور جس نے اسے ماننے سے انکار کیا اسے موت ملی اور اس کی املاک لوٹی گئی۔ مشہور اسلامی مفکر جید ابن خطاب کے مقبرے پر اس نے ذاتی طور پر حملہ کیا اور خود اسے گرایا۔ مزاروں اور صوفی سلسلے پر حملے کا ایک نیا باب شروع ہوا۔ اسی دوران اس نے محمد ابن ساد کے ساتھ معاہدہ کیا۔ محمد ابن ساد دريا کا حکمراں تھا اور مال و دولت اور فوج دونوں اس کے پاس تھے۔ دونوں نے مل کر تلواروں کے ساتھ - ساتھ جدید اسلحو کا بھی استعمال شروع کیا۔ ان دونوں کے معاہدے سے دور دراز کے علاقوں میں پہنچ کر اپنے نظریے کو مسلط اور کھلے عام دوسرے عقائد کو تباہ کرنا آسان ہو گیا۔ دیگر عقائد سے وابستہ تمام کتابوں کو جلانا محمد بن عبدالوہاب کا شوق بن گیا۔ اس کے ساتھ ہی اس نے ایک اور گھناؤنا حکم جاری کیا اور وہ یہ تھا کہ جتنی صوفی مزاریں ، مقبرے یا قبریں ہیں انہیں توڑ کر وہیں پیشاب خانہ بنایا جائیں۔

سعودی عرب جو کہ اعلانیہ طور پر وہابی عقیدہ پر مبنی قوم ہے، اس نے محمد بن عبدالوہاب کی روایت کو جاری رکھا۔ بات یہاں تک پہنچ گئی کہ 1952 میں بت پرستی کا نام دے کر اس پورےقبر کو ہموار بنا دیا گیا جہاں محمد کے پورے خاندان اور ساتھیوں کو دفن کیا گیا تھا۔ ایسا اس لئے کیا گیا کہ لوگ زیارت کے لئے ان قبر پر جاکر محمد اور ان کے خاندان کو یاد کرتے تھے۔ اکتوبر 1996 میں کعبہ کے ایک حصے المكررما کو بھی انہی وجوہات سے گرایا گیا۔ کعبہ کے دروازے سے پہلے واقع الملتاجم جو کہ کعبہ کا یمنی حصہ ہے، اس کے خوبصورت پتھروں کو توڑ کر وہاں پلائی وڈ لگا دیا گیا، جس سے کہ لوگ پتھر کو چومے نہیں، کیونکہ ایسا کرنے پر وہابی اسلام کے نزدیک یہ بت پرستی ہو جاتی ہے۔ ابھی حال ہی میں 'دی انڈیپنڈینٹ ' کی ایک رپورٹ کے مطابق مکہ کے پیچھے کے حصہ میں جن  کھمبوں پر محمد کی زندگی کے اہم حصوں کو پتھروں پر نكاشی کرکے درج کیا گیا تھا ، ان کھمبوں کو بھی گرا دیا گیا۔ ان کھمبوں پر کی گئی نكاشی میں ایک جگہ عربی میں یہ بھی درج تھا کہ محمد کس طرح سے معراج ( اسلامی منظوری کے مطابق محمد کا خدا سے ملنے جانا ) پر گئے۔

وہابیت اسلام کی پوری تاریخ ، مفروضات، باہمی ہم آہنگی اور پہچانوں کے ساتھ کھلواڑ کرتا آیا ہے۔ ایک ہی شناخت ، ایک ہی طرح کے لوگ ، ایک جیسی کتاب اور نسلی طہارت کا نعرہ ہٹلر نے تو بہت بعد میں دیا، اس کی بنیاد تو وہابیت نے انیسویں صدی میں ہی اسلام کے اندر رکھ دی تھی۔

عرب سے لے کر جنوبی ایشیا تک وہابیت نے اپنی اس طہارت کا رقص بہت پہلے سے دکھانا شروع کر دیا تھا، لیکن گزشتہ کچھ دہائیوں میں اس نے اپنا گھناؤنا اور ظلم اور بھی صاف کر دیا۔ جہاں ایک طرف میولیا سلسلے نے تیرہویں صدی میں عورتوں کے لئے سلسلے کے دروازے نہ صرف کھولے بلکہ ان کو برابر کا درجہ دیا تھا، وہیں دوسری طرف وہابی اسلام نے عورتوں کو زندہ دفن کرنا شروع کر دیا۔ بےپردگی کے نام پر عورتوں کے چہروں کے حصے بدنما کرنے اور عورتوں پر زنا کا الزام لگا کر ان پر سنگساری کرکے مارنا اسلامی روایت بنا دیا۔ وہابیت پر یقین نہ رکھنے والے مسلمانوں کو اسلام کے دائرے سے خارج کرکے انہیں سرعام قتل کرنا جائز اور حلال بتایا جانے لگا۔ یہ صرف اسلام کے پیروکاروں کے ساتھ سلوک کی بات ہے۔ دیگر مذاہب پر کفر کا الزام لگا کر انہیں ختم کرنا، املاک لوٹنا ، ان کی عورتوں کو زبردستی وہابیت قبول  کروانا ان کے لئے ایک عام بات بن چکی ہے۔

وہابیت یا وہابی اسلام مسلسل پوری دنیا کے لئے خطرہ بنتا جا رہا ہے۔ موت کے ان سوداگروں کی کرتوت کو عام طور پر اسلامی دہشت گردی کا نام دیا جاتا ہے ، جس کی سازش واشنگٹن اور لندن میں رچی جاتی ہے اور حکمت عملی سعودی عرب سے لے کر جنوبی ایشیا تک تیار کی جاتی ہے۔ القاعدہ ، طالبان ، سپاه سهبا ، جماعت دعویٰ ، الخدمت فاؤنڈیشن، جیش محمد، لشکر طیبہ جیسی تنظیم اس سازش کو انجام دے کر مسلسل خونی کھیل کھیل رہے ہیں۔

جنوبی ایشیا میں وہابی اسلام کی جڑوں کو مضبوط کرنے کا کام مولانا مودودی نے انجام دیا۔ حکومت الٰہیا اسی سازش کا حصہ ہے جس کے تحت غیر - وہابی عقائد کو ، چاہے وہ اسلام کے اندر کی عقیدت ہوں یا غیر - اسلامی، جڑ سے اکھاڑ پھینکنے اور ان کی جگہ ایک ایسا نظام کھڑا کرنے کی منصوبہ بندی ہے جس میں ہٹلر جیسا وہابی پرچم لہرایا جا سکے۔ کس سے پوشیدہ ہے کہ سعودی عرب کا ہر قدم امریکہ کی معلومات میں اٹھتا ہے۔ کیا امریکہ کو اس کا علم نہیں کہ سعودی عرب اپنے ملک سے لے کر پاکستان اور بنگلہ دیش تک ان تنظیموں کی تمام طرح سے مدد کر رہا ہے اور اس کی چھایا ہندوستان پر بھی منڈلا رہا ہے۔

آج کی وہابی عقیدہ کے پاس صرف تلوار اور رائفلیں نہیں ہیں بلکہ ان کے ہاتھوں انتہائی خطرناک جدید ہتھیار لگ چکے ہیں۔ ان کی نظریں پاکستان میں موجود جوہری ہتھیاروں پر بھی ہے۔ عقیدہ جب جنون بن جائے تو وہ تمام حدیں پار کر سکتی ہے۔ جو لوگ عید کے دن مساجد میں گھس کر لاشوں کے انبار لگا سکتے ہیں وہ موقع ملنے پر کیا کچھ نہیں کر گزر سکتے۔ وہابیت کا خطرہ اس تناظر میں دیکھا جانا چاہئے۔ اس خطرے کی زد میں ہر وہ شخص ہے جو اس درندگی کے خلاف کھڑا ہے۔

9 ستمبر ، 2013  بشکریہ: ہندی روز نامہ ،جن ستّا

URL for Hindi article:

http://www.newageislam.com/hindi-section/reality-of-wahhabism-वहाबियत-की-असलियत/d/14099

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/khurshid-anwar,-tr-new-age-islam-خورشید-انور/reality-of-wahhabism-وہابیت-کی-اصلیت/d/14113

 

Loading..

Loading..