New Age Islam
Thu May 19 2022, 11:28 AM

Urdu Section ( 17 Jan 2022, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

What's The Connection Between Islam and Cleanliness? Cleanliness Is Half of the Faith صفائی نصف ایمان ہے! مسلمان اور صفائی؟

حافظ محمد ہاشم قادری مصباحی جمشید پور

13 جنوری 2022

اسلام نے صفائی کو لازم و ملزوم کردیا ہے یہانتک کہ صفائی کو نصف ایمان قرار دیا، آقا ئے دو عالم ﷺ نے ارشاد فر مایا: اَ لطَّھُوْ رُ شَطْرُالْاِیْمَانِ صفائی آدھا ایمان ہے۔(مسلم شریف،:223مشکوٰۃ المصابیح ص:31)

cleanliness is half of the faith طہارت اور صفائی کو آدھا ایمان اس لیے فر مایا کہ طہارت سے ظاہری صفائی ہوتی ہے اور ایمان سے باطن کی صفائی ہوتی ہے۔ صفائی کی اہمیت دین کے ساتھ دنیا کے لیے بھی ضروری ہے،صفائی کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے بھی لگا یا جا سکتا ہے کہ انسان اللہ کی تمام مخلوق میں اشر ف المخلوقات میں شامل ہے۔انسان جیسے ہی پیدا ہوتا ہے بہت غلاظت میں لپٹا رہتا ہے۔پیدائش کے عمل کے بعد اُس کی نار کاٹی جاتی ہے جس کے ذریعے ماں کے پیٹ میں بچہ کو غذا ملتی تھی، نار کے کاٹنے کے بعد ہی دائی یا نرسیا گھریلو عورتیں سب سے پہلے بچہ کو نہلاتی ہیں پاک و صاف کرتی ہیں پھر کپڑے سے پوچھ کر اُس کو ماں کی گود میں دیاجاتا ہے۔ اس کے بر عکس جانور اُس بچہ کی گندگی کو چاٹ لیتا ہے،صاف صفائی ہی انسان کو جانوروں سے امتیاز کرتی ہے۔

ہر ذی عقل شخص اس بات سے بخوبی واقف ہے کہ امیر ہو یا فقیر سبھی کے لیے صفائی ستھرائی ضروری ہے،صفائی اِنسانی وقار کو عظمت وشرف عطا کرتی ہے۔گندگی سے لوگ دور بھاگتے ہیں گندے انسان سے لوگ نفرت کرتے ہیں،گندگی انسان کی عزت وعظمت کی بد ترین دشمن ہے۔ دین اسلام نے جہاں انسان کو صفائی کی جانب توجہ دلائی،صفائی کو نصف ایمان بتا یا وہیں انسان کو کفر وشرک کی نجاستوں سے پاک رہنے کی تلقین کی تاکہ انسان تمام طرح کی نجاستوں غلاظتوں سے پاک رہے اور بطور اشرف المخلوقات ہونے کے وہ عزت ورفعت کے ساتھ رہے اور انسانی اخلاق و پاکیزگی کی اعلیٰ تعلیمات کے ذریعے انسانیت کا وقار بلند رکھے۔بدن کی پاکیزگی ہو یا لباس کی پاکی ستھرائی، ظاہری ہَیَّت کی عمدگی ہو یا طور طریقے کی اچھائی، مکان اور دوکان کی صاف صفائی ہو یا اور دوسرے سازو سامان کی صفائی ہو یا سواری کی دُھلائی الغرض ہر ہر چیز کو پاک و صاف و ستھرا اور جاذبِ نظر رکھنے کی دین اسلام نے خصو صی تعلیم اور ترغیب دی ہے۔

ارشاد باری تعالیٰ ہے: إِنَّ اللّہَ یُحِبُّ التَّوَّابِیْنَ وَیُحِبُّ الْمُتَطَہِّرِیْنَترجمہ:بیشک اللہ بہت توبہ کرنے والوں سے محبت فرما تا ہے اور خوب صاف ستھرے رہنے والوں کو پسند فر ماتا ہے۔(القرآن،سورہ البقرۃ:2 آیت222 )

حضرت سہل بن حنظلہ رضی اللہ عنہٗ سے روایت ہے، نبی کریم ﷺ نے ارشاد فر مایا: ’’ جو لباس تم پہنتے ہو اسے صاف ستھرا رکھو اور اپنی سواریوں کی دیکھ بھال کیا کرو اور تمھاری ظاہری ہَیَّت ایسی صاف ستھری ہو کہ جب لوگوں میں جائو تووہ تمھاری عزت کریں۔( جامع صغیر،حرف المہزۃ،ص:22،حدیث257:) حضرت علامہ عبد الر ئوف مناوی رحمۃ اللہ علیہ فر ماتے ہیں:اس حدیث پاک میں اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ ہروہ چیز جس سے انسان نفرت و حقارت محسوس کرے اس سے بچنا چاہئے۔( فیض القدیر،حرف المہزۃ،ج:1/ص249حدیث:257) علمائے کرام کی توجہ مبذول ہونی چاہئے پان کھا کر اس کی پیک چھوٹی بالٹی میں ، اُگلدان میں تھوکتے ہیں بد بو سے روم اور ارد گرد کی حالت انتہائی خراب رہتی ہے، دیکھی نہیں جاتی پھر وہی بچوں سے صاف کر اتے ہیں اور جہا ںرہتے ہیں اُس کے اطراف میں پان کی غلاظت(پیک،تھوک) تھوک کر گندہ کیے رہتے ہیں۔ بدن و کپڑے کی صفائی کے ساتھ روم بستر چادر وغیرہ کی صفائی پر بھی توجہ دینی چاہئے۔

تندرستی کے لیے صفائی ضروری:

تندرستی و بیماری سے بچائو کے لیے صفائی بہت ضروری ہے، جسم کی صفائی کے لیے روزانہ غسل کرنا چاہئے، اگر جسم صاف نہ رکھا جائے تو مسامات بند ہو جاتے ہیں جس سے طرح طرح کی بیماریاں پیدا جاتی ہیں۔ جسم کی صفائی اس قدر ضروری ہے کہ یہ مذہبی فرائض میں شامل ہے۔ چنانچہ اسلام سبھی انسانوں کو کھانے سے پہلے ہاتھ دھونے اور کھانے کے بعد ہاتھ دھونے اور منھ صاف کرنے کا حکم دیتا ہے۔یاد رہے آجکل ٹشو پیپر tissue paper سے لوگ ہاتھ اور منھ صاف کرتے ہیں جس سے ہاتھ صحیح طرح سے صاف نہیں ہوتا ہاتھ میں کھانے کا اثر باقی رہتاہے وقت گزرتے اس میں جراثیم پیدا ہوجاتے ہیں۔ قدرت نے پانی جیسی انمول شے سے نوازا ہم اس کی بے قدری کررہے ہیں یاد رہے بغیر پانی سے ہاتھ اور منھ قطعی نہیں صاف ہوتا ،دانتوں میں کھانے کے ذررات لگے رہتے ہیں وغیرہ وغیرہ ۔ صفائی رکھنے سے انسان ہمیشہ تندرست،صحت مند رہتا ہے،صاف ستھرے انسان کی ہر جگہ عزت اور قدر ہوتی ہے اور اس کے برعکس میلے کچیلے انسان سے ہر شخص دور رہتا ہے اور نفرت کا اظہار کرتا ہے۔

ہر چیز کی صفائی پر خاص توجہ دیں: ہم سب کو خاص کر مسلمانوں کو چاہئے جسم و لباس کی صفائی کے ساتھ ساتھ ہمیں گلی،محلوں،سڑکوں کی صفائی بھی کا خیال رکھنا چاہیے کیوںکہ اچھے ماحول اچھے گھرانوں سے ہی انسان اپنی پہچان کرواتا ہے ۔ اور اس سے اللہ بھی خوش ہوتا ہے ۔ وَاللّہُ یُحِبُّ الْمُطَّہِّرِیْنَاور اللہ خوب پاک ہونے والوں کو پسند فر ماتا ہے۔ (القرّن،سورہ،توبہ:9آیت108) معلوم ہوا کہ رب تعالیٰ صفائی رکھنے والوں سے محبت رکھتا جیسا کہ اوپر مذکورہ آیت میں بیان آچکا ہے اور اس آیت کریمہ سے معلوم ہوا کہ صفائی رکھنے والوں کو پسند بھی فر ماتا ہے اس سے بڑی نعمت اور کیا ہو سکتی ہے؟۔ [ یُحِبُّونَ أَن یَتَطَہَّرُواْ :وہ لوگ خوب پاک ہونا پسند کرتے ہیں۔]: یہ آیت مسجد قباوالوں کے حق میں نازل ہوئی، سید عالم ﷺ نے اُن سے فر مایا: اے گروہِ انصار! اللہ عَزَّ وَجَلََّّ نے تمہاری تعریف فر مائی ہے، تم وضو اور استنجے کے وقت کیا عمل کرتے ہو؟ اُنہوں نے عرض کی: یا رسول اللہ ﷺ،ہم بڑا استنجا تین ڈھیلوں سے کرتے ہیں،اس کے بعد پانی سے طہارت کرتے ہیں۔(تفسیر مدارک،ص:455)

بجبجا تی نالیاں،سُکڑتی سڑ کیں مسلم محلوں کی پہچان:

شاندار مکان، مکان کے سامنے کھڑی شاندار گاڑی ،گھر کا کچڑاdustbinڈسٹ بنس سے میں پھینکنے کے بجائے گھر ہی کے دائیں بائیں جلانے میں کون سی عقلمندی ہے افسوس صد افسوس 150روپیے مہینہ کچڑا پھنکنے والی گاڑی کو نہیں دیتے کچڑا گھروں کے سامنے ہی پھینک کر دروازہ بند کر لیتے اور اپنی آنکھ کے بند کرکے دوسروں کی آنکھ بھی بند سمجھتے ہیں کچڑا جلاکر ماحولیات کو بھی خراب کرتے ہیں وہی کچڑا اُڑ،اُڑ کر پھر گھروں میں واپس آتا ہے۔ہمارے معاشرے میں گلیوں،سڑکوں یا پارکوں میں کچڑا پھینکنا ایک عام سی بات بن چکی ہے۔

اگر دیکھا جائے عوامی مقامات پر ڈسٹ بِن شاذو نادر ہی پائے جاتے ہیں۔ یہاں تک کہ اگر ڈسٹ بِن ہوں توبھی ان کا صحیح استعمال نہیں کرتے ہیں۔ بلکہ وہ کوڑا باہر پھینکنا پسند کرتے ہیں اس کے نقصانات پر غور کئے بغیر سڑک پر ہی پھینک دیتے ہیں، اس سے صفائی اور حفظانِ صحت کے بارے میں ہمارا رویہ ظاہر ہوتا ہے۔اسی طرح چلتے ہوئے لوگ دیواروں پہ پان کی پیک تھوک دیتے ہیں،جو نہایت معیوب عمل ہے وغیرہ وغیرہ۔ بڑے افسوس و شرم کے ساتھ مجھے لکھنے میں کوئی عار نہیں محسوس ہورہا ہے سُکڑتی سڑکیں،گندگی سے بج بجاتی نالیاں مسلم محلوں کی پہچان بن گئی ہیں۔اپنی زمین کی ایک اِنچ زمین کو نہ چھوڑ کر پورے پر مکان بنالینا سڑ کوں پر سیڑھیاں بنوانا اس کے ارد گرد سڑک پر پکی پلاسٹر کرلینا پھر گھر کے آگے گاڑیاں کھڑا کرنا عام سی بات ہے، گند گی کا انبار اور الزام حکومت پر عجیب بات ہے؟۔ صاف صفائی کا حکم تو ہمارا مذہب اسلام دے رہا ہے۔آج ہمارے مذہب کا حکم دوسرے مذہب کے لوگ نام بدل کر رکھ رہے ہیں اور’’سوچھ بھارت‘‘ کی یوجنا چلا رہے ہیں اس یوجنا پر دوسرے محلوں میں کیسے کام ہورہا ہے کم لکھنا زیادہ سمجھنا آپ کی ذمہ داری پر چھوڑتا ہوں؟۔ خدارا خدارا صفائی ستھرائی پر خاص توجہ دیں تاکہ آپ کا معاشرہ صحت مند ہو۔کوڑا کو سڑ کوں میں نہ پھیکیں کوڑے کو ،کوڑے دان میں ڈالیں۔ اس سے محلہ صاف رہتا ہے بیماریاں کم ہوتی ہیں۔مچھر نہیں ہوتے اگر آپ صفائی پسند ہیں تو آپ اپنے پڑوسیوں کو بھی اس کی جانب توجہ دلائیں وغیرہ وغیرہ۔

صفائی اور صحت لازم و ملزوم:

کہتے ہیں جان ہے تو جہان ہے!

؎ تنگ دستی اگر نہ ہو غالبؔ ٭ تندرستی ہزار نعمت ہے

مگر انسان سب سے زیادہ بے پرواہ صحت وتند رستی کے معاملے میں ہی کرتا ہے۔ ہندوستان کے مسلمان کچھ زیادہ ہی بے پرواہ ہیں۔ ایک غیر مسلم جس کے یہاں ایمان کا کوئی تصور نہیں اس کے گھر میں چولھے کو’’ چوکا‘‘ پوتے یا دھوئے بنا کھانا نہیں بنتا، وہ غسل کئے بنا’’بھوجن‘‘ کھانا نہیں کھاتا۔ گرو نانک کاعقیدت مند اپنے’’دُووار‘‘( دروازہ) کو صرف اس لیے دھوتا ہے کہ دروازے پر اگر گندگی ہوگی تو’’گرو‘‘ داخل نہیں ہوں گے اورحضرت محمد ﷺ کے اُمتی جانثار بھول گئے کہ گندگی کی جگہ رحمت کے فرشتے نہیں آتے!۔ اسی گندگی کی وجہ سے ہی ہزارطرح کی بیماریوں میں مبتلا ہوتے ہیں۔ ہر اسپتال میںمسلمان مریضوں کی تعداد اِن کی آبادی سے تین گنا زیادہ ہے۔ اس کی اصل وجہ ہے ہم صفائی سے کوسوں دور محلوں کی صفائی ستھرائی کا اہتمام نہیں کرتے۔بیماری کی وجہ سے عمر بھی گھٹ جاتی ہے۔ بی بی سی کی ایک رپورٹ کے مطابق ’’ملک ِہندوستان میں اوسطاً سب سے زیادہ عمر کیرالہ کے لوگوں کی ہوتی ہے،کیونکہ وہی سب سے زیادہ صاف صفائی کا اہتمام رکھتے ہیں۔ جولوگ صاف صفائی کا اہتمام کرتے ہیں وہ کم بیمار پڑتے ہیں۔‘‘ اللہ ورسول کے فر مان پر عمل پیرا ہوں اللہ ہی عمل کی توفیق رفیق عطا فر مائے۔

13 جنوری 2022، بشکریہ:روزنامہ راشٹریہ سہارا

URL: https://www.newageislam.com/urdu-section/connection-islam-cleanliness-faith/d/126179

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Loading..

Loading..