New Age Islam
Sat Oct 31 2020, 01:07 PM

Urdu Section ( 30 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Deoband Controversy: The honour of Darul Uloom at stake نرغے میں دارالعلوم دیوبند کا وقار

By Fuzail Ahmad Nasiri Alqasmi

[Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk]

30 January 2011

Renowned scholar of Hadiths Hadhrat Anzar Shah Kashmiri had once predicted before me that Maulana Marghuboor Rehman’s presence was keeping much turbulence suppressed and after that Darul Uloom will become besieged by great turbulence. I had also written in an article on Maulana Bijnori: “The grief over the loss of the brave souls ( Maulana Khamosh and Maulana Umeduzzaman Kairanvi) was still fresh when the year gone by gave us another shock that could precede many bigger shocks. The deceased had set such a great example with his deeds and character that will be as difficult as creating a miracle for his successors.” When I had written these lines, there was no sign of any tumult. Maulana Abul Qasim Banarasi had been appointed ad-hoc muhtamim. But the events that occurred after that proved Maulana’s predictions and my apprehensions correct.

Now the situation in Darul Uloom has been explosive since January 11 and has forced Maulana Vastanvi to submit his resignation. The fact is that the muhtamim of Jamia Ashaatul Uloom Akl Kuan, Maulana Vastanvi had been elected as the VC unanimously. That was the 11th of January and today is the 26th. The turbulence with which the Darul Uloom Deoband has passed during these 15 days is cause enough to make any true Muslim livid.

My policy is not to discuss controversial issues and so had been keeping silent this time as well. Particularly, I could not muster courage to say anything in the issue related to Darul Uloom Deoband as expressing my personal view would mean stirring the hornet’s nest. Secondly, I do not suffer from ‘foot-into-mouth’ disease. So I was silent with my pen closed. But recently, I came across two persons, one of them was a supporter of Maulana Vastanvi and the other was his opponent. Both had their own arguments. Vastanvi’s opponent’s view was that he did not deserve the post of the VC of Darul Uloom because he is an admirer of Hitler II and killer of Muslims praising him and calling him a well wisher of all the communities whereas the situation was that the atmosphere of murder and mayhem Modi had created and the way Modi’s machinery had worked against the Muslims that had put the holocaust created by the Nazis in Germany to shame.

Modi is such a man that was declared a blot on humanity and a burden on earth even by non-Muslims not associated with BJP. Maulana Vastanvi’s coming forward in support of such a person was a manifestation of his corrupt self. Apart from it he is a supporter of idols. He had presented a framed picture of Radha Krishna to a minister of Maharashtra Vijay Dutt Sagar in a political gathering. Moreover, after taking over as the VC of Darul Uloom Deoband, he started meeting political pundits instead of meeting the ulema. More importantly, he has not been elevated to this position with the grace of God but indulged in horsetrading buying off members of Majlis Shoura.

Moreover he is not a graduate of Darul Uloom and so is not aware of the traditions of it. He is planning to turn this legacy of our forefathers into a modern university. Therefore, he has no right to stay as the muhtamim. Every protest by the students against him is right, every report against him in the newspapers is justified and every opinion of all the intellectuals and ulema in his opposition is acceptable and we support all of them.

On the other hand the pro-Vastanvi person’s view was that Maulana Vastanvi had not become the Muhtamim of Darul Uloom Deoband all by himself but had been appointed by the respected Majlis-e-Shoura of Darul Uloom that has the power of governing body and its allegiance was mandatory. Revolt against the Amir is not permissible. It is the unanimous decision of the ulema that the people revolting against the Khalifa deserves punishment irrespective of whether the Khalifa is righteous or corrupt. When Darul Uloom’s Majlis-e-Shoura has elected him as the Muhtamim of Darul Uloom, no one has the right to question its decision. So far as the issue of presenting the idol on October 12 is concerned, it was presented not in respect for the idol but in honour of the minister. Don’t Muslims today have the picture of Gandhiji in their pockets? Don’t the ulema and intellectuals of this country call it Gandhiji’s country? Now over to the question of Modi-praise, why do the people forget that our ulema have always supported the Congress? Isn’t Congress the killer of Muslims? Did not Congress demolish the Babri Masjid? Isnt Congress responsible for the backwardness of the Muslims? Can’t the Congress be held responsible for the demolition of Noori Masjid? Etc. etc. Therefore, these protests, sloganeering and acts of insulting our ulema are wrong, totally wrong and beyond the truth. These acts are damaging the image of Darul Uloom. The credibility of Majlis-e-Shoura is going to the dogs. The world is laughing at the teachers and students of the representatives of Sunnah-wal-jamat. Others have got an opportunity to mock us. What is being done with noise could be done silently. 

I heard the arguments of both and said to myself that judging the decision of the Shoura was a prerogative of the elders who are aware of the character and traditions of Darul Uloom. Only they have a great following among the masses by virtue of their vast knowledge and extensive study. So I do not find myself in a position to comment on this issue. But since I have also studied there for three years, I can at least say that whatever is happening in Darul Uloom is not sending right messages outside. Its dignity is getting affected. These newspapers and electronic media are not playing a good role. It is an issue between the mother and the son. It should not be publicised.

 It would be better if the influential persons of the society would come forward, know about the views of the teachers and then present a memorandum to the Shoura to find a peaceful solution. This way the atmosphere would remain calm and Darul Uloom could be safe from criticism. Whatever is to be done should be done keeping in mind that the great institution of Asia is not affected in any way otherwise its detractors will get more opportunities to malign it.

Source: Daily Hindustan Express, New Delhi

 

نرغے میں دارالعلوم دیوبند کا وقار

فضیل احمد ناصری القاسمی

فخر المحدثین حضرت مولانا سید محمد انظر شاہ کشمیریؒ کو بندہ نے ایک مرتبہ یہ پیش گوئی کرتے ہوئے سنا تھا کہ مولانا مرغو ب الرحمن بجنوری کی موجودگی بہت سے فتنوں کو دبا ئے ہوئے ہے، ان کے بعد دارلعلوم بڑی آزمائشوں میں مبتلا ہوگا۔بندہ نے بھی مولانا بجنوری پر لکھے گئے اپنے ایک مقالے میں یہ تحریر کیا تھا‘‘ (مولانا خاموش اور مولانا عمید الزماں ) سورماؤں کو کھونے کا غم اور ان زخموں کی ٹیس میں ابھی تازہ ہی تھی کہ جانے والے سن کی طرح اس آنے والے سن نے بھی جھٹکا دیا اور وہ بھی کرارا جھٹکا جو بڑے بڑے جھٹکوں کا پیش خیمہ بن سکتا ہے ’’ اور ‘‘مرحوم اپنی صفائی باطن اور پاکیزہ فطرت کی بنا پر عزیمت کی ایسی مثال قائم کرگئے کہ ان کے جانشینوں کے لئے اس راہ پر چلنا کسی معجزہ سے کم نہ ہوگا۔’’ احقر نے جس وقت یہ لکھا تھا اس وقت تک ہنگامے کی کوئی صورت نہ تھی، مولانا مفتی ابوالقاسم بنارسی عبوری مہتمم نامزد کئے گئے تھے لیکن بعد کے حالات نےثابت کردیا کہ حضرت شاہ صاحب ؒ کی پیش گوئی اور ہمارا اندیشہ درست تھا۔ اب عالم یہ ہے کہ 11جنوری سے ہنوم دارالعلوم کے حالات دھماکے خیز بنے ہوئے ہیں اور نوبت یہاں تک پہنچ گئی ہے کہ اس کے نومنتخب مہتمم مولانا غلام و ستانوی نے استعفیٰ دینے کے پیش کش کردی ہے۔

 بات دراصل یہ ہے کہ مدرسہ اشاعت العلوم اکل کو ا مہاراشٹر کے بانی و مہتمم مولانا غلام محمدوستانوی کو دارالعلوم کی مجلس شوریٰ نے باتفاق رائے اور باجماع امت مہتمم منتخب کرلیا، وہ جنوری کی 11تاریخ تھی اور آج 26جنوری ہے۔ ان 15دنوں میں دارالعلوم کے سر سے جو قیامت گزری اور گزررہی ہے وہ ہر بیدار مغز مسلمان و محب شریعت محمدیؐ کو تڑپا دینے کے لئے کافی ہے۔ بندہ کی عادت رہی ہے کہ متنازعہ موضوع پر بات نہیں کرتا ، اس بار بھی مصلحت کی یہی دبیز چادر اوڑھ رکھی تھی ، خصوصاً دارالعلوم جیسے ادارے کے سلسلہ میں کچھ کہنے کی جرأت بالکل بھی نہیں ہوپارہی تھی کیوں کہ ایسے موقع پر رائے زنی کرنا بھڑکے چھتّے میں ہاتھ ڈالنا ہے اور پھر بندہ کو مسلسل قول کا مرض بھی نہیں ، اس لے خاموش تھا اور قلم کے ہونٹ سے رکھے تھےلیکن پچھلے دنوں 2ایسے آدمیوں سے ملاقات ہوئی جن میں سے ایک مولانا وستانوی کا حامی تھا اور دوسرا ان کا مخالف اور دونوں کے پاس اپنے اپنے دلائل تھے۔ مخالف وستانوی کا کہنا تھا کہ وہ دارالعلوم کا منصب اہتمام سنبھالنے کے اہل نہیں کیو نکہ وہ ہٹلر ثانی ،قاتل اہل ایمان یعنی نریندر مودی کے پرستار ہیں، ان کی تعریفیں کرتے ہیں، انہیں ہرطبقے کا خیر خواہ تسلیم کرتے ہیں، جب کہ حالت یہ ہے کہ گجرات میں وحشت و بربریت اور قتل وقتال کا جو ماحول اس نے گرم کیا تھا او رمسلمانوں کے خلاف جس طرح مودی کی مشنری کام کر رہی تھی اس نے جرمنی میں نازیوں کے ذریعہ یہودیوں کے خلاف ہونے والے ہولو کاسٹ کا بھی مات دے دیا تھا، مودی ایسا انسان ہے کہ بی جے پی سے کٹا ہوا ہر مسلمان اور سیکولر غیر مسلموں نے بھی اسے ننگ انساینت اور خدا کی زمین پر بوجھ یقین کیا۔

 ایسے شخص کی حمایت میں مولانا وستانوی کا آنا ان کی مفسد ذہنیت کی غمازی کررہا ہے ۔ اس کے ماسوادہ مورتی نواز بھی ہیں۔ اورنگ آباد کی ایک سیاسی تقریب میں مہاراشٹر کے ایک وزیر جنے دت شرساگر کے ایک استقبال میں انہوں نے اپنے ہاتھوں سے ایک فریم پیش کیا تھا جس میں رادھا کرشن کی مورتی تھی۔ علاوہ ازیں مہتمم  بننے کے بعد علمائے کرام سے ملنے کے بجائے سیاسی پنڈتوں سے ملنا شروع کردیا۔ مزید براں یہ اہتمام انہیں منجانب اللہ نہیں ملا ہے بلکہ انہوں نے اس کے حصول کے لیے بڑی جوڑ توڑ سے کام لیا ہے اور مجلس شوریٰ کے بعض اہم ارکان کو انہوں نے خرید بھی لیا ہے،نیز یہ کہ مولانا وستانوی دارالعلوم کے غیر فارغ التحصیل او رمسلک دارالعلوم سےیکسر نا آشنا ہیں ۔ وہ اکابر کی وراثت اس ادارہ کو عصری یونیورسٹی بنانے کی کوشش میں ہیں ۔لہٰذا انہیں مہتمم بنے رہنے کا حق نہیں ۔ان کے اہتمام کے خلاف طلبہ کا ہر احتجاج ،اخبارات کی ہر رپورٹ ،علما ودانشوروں کی ہررائے نہ صرف قابل قبول ہے بلکہ واجب العمل بھی ۔ ہم ایسے حضرات کی کھلی حمایت کرتے ہیں ۔ یہ ولائل تو مخالف وستانوی کے تھے لیکن دوسری طرف حامی وستا نوی کے دلائل یہ تھے کہ مولانا وستانوی خود سے مہتمم نہیں بنے ہیں بلکہ انہیں دارالعلوم کا باوقار ادارہ مجلس شوریٰ نے منتخب کیا ہے۔

 اس مجلس کی ہیئت حاکمہ اور قوت نافذہ کی حیثیت حاصل ہے۔ یہ مجلس اولو الا مر ہے جس کی اطاعت نہ صرف بہتر بلکہ واجب ہے۔ امیر کوئی بھی بنے اس کے خلاف بغاوت جائز نہیں۔ خلیفہ خواہ صالح ہویا فاسق وفا جر علما اسلام کا متفقہ فیصلہ ہے کہ خلیفۃ المسلمین کے خلاف خروج کرنے والا مستحق سزا ہے ۔ جب دارالعلوم کی الوالا مر مجلس نے انہیں اپنا خلیفہ چن لیا ہے تو ان کے خلاف چارہ جوئی کا کسی کو کوئی حق نہیں ہے۔ جہاں تک 12اکتوبر 2010کو مورتی پیش کرنے کا سوال ہے تو وہ مورتی کے احترام اور عقیدت میں نہیں  بلکہ وزیر کے اعزاز میں ایسا کیا گیا تھا۔ کیا آج مسلمانوں کی جیب میں گاندھی کی تصویر یں نہیں ہوتیں ؟ کیا علما اور دانشور مسلمان اس ملک کو گاندھی کا ہندوستان نہیں کہتے؟ رہی بات مودی نوازی کی تو آخر لوگ کیو ں بھول جاتے ہیں کہ ہمارے علما نے کانگریس کا ہمیشہ ساتھ دیا اور اپنے کانگریسی ہونے کو فخر یہ بیان کیا۔ کیا کانگریس مسلمانوں کی قاتل نہیں؟ کیا مودی نے کانگریس سے بھی زیادہ مسلمانوں کو نقصان پہنچایا ہے؟ کیا بابری مسجد کانگریس نہیں ڈھائی؟ کیا مسلمانوں کی پسماندگی کی ذمہ دار کانگریس نہیں ہے؟ کیا نورمسجد انہدام کی ذمہ داری کانگریس پر عائد نہیں ہوتی؟ وغیرہ وغیرہ ۔

 لہٰذا لوگوں کا یہ احتجاج ،یہ نعرہ بازی اور علما کی پگڑی اچھالنے والے یہ اقدامات غلط ،سراسر غلط اور حق سے بعید ہیں۔ ان اقدامات سے دارالعلوم کا وقار مجروح ہورہا ہے۔ مجلس شوریٰ کی اہمیت پامال ہورہی ہے ۔ مسلک اہل سنت والجماعت کا صحیح ترجمان دارالعلوم اور اس کے وابستگان علما وطلبہ کی جگ ہنسائی ہورہی ہے ۔ غیر وں کو ہم پر ہنسنے کاموقع مل رہا ہے ۔ جو کام ہا ہو کے ذریعہ انجام پارہا ہے وہ خاموش طریقے سے بھی کام انجام پاسکتا تھا۔ راقم نے دونوں کی مدلل گفتگو سنی۔ ان تقریروں کے سننے کے بعد دل نے کہا کہ شوریٰ کے فیصلے کی تغلیظ یا تصحیح کا حق تو ان اکابر کو ہے جنہیں مزاج دارالعلوم اور اس کے منہاج سے گہری واقفیت ہے،جو اپنی علمی گہرائی اور وسعت مطالعہ کے علاوہ وخواص میں بھی کامل اثر ورسورخ رکھتے ہیں۔ اس لیئے بندہ اس قضیہ پر خود کو تبصرہ کرنے سے عاجز پاتا ہے ۔ لیکن احقر چوں کہ دارالعلوم کا ایک فرزند بھی ہے، وہاں کی علمی اور روحانی فضا میں اس نے بوئے مدینہ محسوس کی ہے، اس کے درودیوار سے بھی اس نے جینے کے سلیقے اور آداب سیکھے ہیں، وہاں کے نورانی ماحول میں 3سال گذارنے کی سعادت حصہ آئی ہے اور اس کی حیثیت یہ ہے :

گوداں نہیں پہ داں کےنکالے ہوے تو ہیں

 کعبہ سے ان بتوں کو بھی نسبت ہے دور کی

اس لیے اتنا تو ضروری ہی عرض کرسکتا ہے کہ دارالعلوم میں اس وقت جو کچھ بھی ہورہا ہے اس سے کوئی اچھا پیغام نہیں جارہا ہے۔ اس کی عظمت متاثر ہورہی ہے ،اس کا نام بدنام  ہورہا ہے ۔ یہ اخبارات ورسائل اور یہ الیکٹرانک میڈیا اس معاملے میں کوئی اچھا کام نہیں کررہے ہیں۔ یہ ماں اور بیٹے کا معاملہ ہے ، اسے گھر سے باہر نہیں جانا چاہئے۔ اس کی بہتر صورت یہی تھی کہ ملک کے ہر صوبہ کی سرگردہ علمی شخصیات سامنے آتیں اور اساتذہ کرام کی رائے معلوم کرکے ایک اجتماعی عرضداشت لکھ اپنے دستخط کے ساتھ شوریٰ کے حوالے کرتیں یا کوئی اور اچھی اور پرامن راہ نکالی جاتی، اس سے حالات خوشگوار بھی رہتے اور دارلعلوم کو تنقید کی زد سے بچایا بھی جاسکتا تھا۔ خیر جو ہونا ہو ،ہولیکن اتنا ضرور عرض ہے کہ ایشیا کی اس عظیم درسگاہ پر حرف نہ آنے پائے۔ ورنہ اگر اسی طرح معاملہ چلتا رہا تو اس کا سفینہ اور بھی ڈانواڈول ہوگا، اس کے حرف گیروں کو مزید مواقع میسر آئیں گے اور یہ کوئی اچھی علامت نہ  ہوگی۔

بشکریہ : ہندوستان ایکسپریس  ، نئی دہلی

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/deoband-controversy--the-honour-of-darul-uloom-at-stake--نرغے-میں-دارالعلوم-دیوبند-کا-وقار/d/4030


 

Loading..

Loading..