New Age Islam
Fri Oct 30 2020, 11:35 AM

Urdu Section ( 25 Oct 2010, NewAgeIslam.Com)

Explosion On The Shrine Of Hazrat Abdullah Shah Ghazi حضرت عبداللہ شاہ غازیؒ کی درگاہ پر دھماکہ

It has become the norm in the South Asian Muslim society to act in denial of our own wrongdoing and blame all the evil deeds of terrorists on the US or India. The Taliban and other militant outfits have totally radicalised the Muslim society in Pakistan, so much so that religious intolerance to them has become synonymous with Islam and righteousness. Sectarian violence has become the order of the day in this so-called Islamic society. Taliban, influenced by Wahabism has made dargahs their target. Dargahs of Data Ganjbakhsh, Abdullah Shah Gazi and now Baba Farid Ganjshakar have been targeted by the Taliban but the middle class intelligentsia and the media in Pakistan loves to live in denial.  This will not help extract the Pakistani society from the morass it has thrown itself in. The Urdu article is published here with its English translation as a prime example. – Editor

 ----

New Age Islam News Bureau's Translation of Urdu article by Bilal Ahad:

Islam and Islamic civilisation is based on truth and valour. It challenges its ideological opponents openly and confronts them in open battlefield. Islam and Islamic civilisation is based on truth and valour. As Islamic civilisation is based on truth and valour, the concept of defeat in its tussle against the evil does not exist in it right from its inception. The followers of Islamic civilisation have always been ready to honour the warrior and the martyr whereas the foundation and history of imperialism and imperialist society has been blackened with lies, deceit and cowardice because it has no ideological base, and even if it has any, it is hollow and vulgar. That’s why it resorts to conspiracy and cowardice. As a result it has always faced defeat and ignominy.

Since its colonial age till today, the imperialist forces have been engaged in their decisive existential battle against Islam, Islamic civilisation and its followers with the help of conspiracies and cowardly acts whereas the signs are telling us that the imperialism is going to bite the dust in the end.

The unfortunate event of the suicide attack in the complex of the mausoleum of the famous Islamic preacher Hadhrat Abdullah Gazi on the evening of October 7 in which two innocent children were martyred and dozens got injured is also the conspiracy and an act of cowardice of the imperialist forces aimed at diverting the hatred against the US in Pakistan towards the communal violence among the various sects of the Muslims. The blast at the mausoleum of Hadhrat Abdullah Gazi and the target killing of Sheikh al Hadith of Jamia Banuria site just two days earlier is an unholy conspiracy to cause Deobandi-Bareillvi confrontation. When the American agents failed to cause Shia-Sunni riot in the month of Muharram by carrying out blasts on Ashura and Chahallum, they targeted the Data Darbar in Lahore and the Dargah Hadhrat Abdullah Gazi in Karachi under the cover of Taliban to pitch the Bareillvi’s against the Deobandis.

Following the suicide attack at the Dargah Hadhrat Abdullah Ghazi, the situation became tense in Sindh and other parts of the country including Karachi. Incidents of arson, firing and shut downs were reported. The reaction to the suicide attack and the show of sympathy and solidarity with the victims was according to human nature and values but the actions the state government took were sufficient to show its callousness. The state home minister Zulfiqar Mirza ordered the Department of Auqaf to seal more than 25 mazars and dargahs in Karachi for indefinite period and prohibited visits of devotees.

The decision of the Home Minister was sure to hurt the sentiments of a particular sect and was also not the solution for the suicide attacks. Therefore, the religious and political leaders of all the religious sects condemned this ridiculous decision of the state government and demanded that the state government should ensure safety and security of the citizens and sacred places. But the truth is that be it the state government or the Federal Government and its allies (ANP, MQM, JUIF) they do not care for the interests of the people or the country. People’s Party and its allies have been using power and authority only for their personal interests.

The MQM in Sindh and the Awami National Party in the Province in association with the People’s Party are busy not only in looting the public resources but also playing the role of paid agents of the US.

The score card of the lobby in power in the state and the country in the last three years is nil, rather it has made life hell for the people putting the security of the country at stake.

It is, therefore, in the greater interests of the people and the country’s existence that the government based on the plans and agenda of America should be thrown out and the reins of the country should be handed over to the true representatives of the people.

As Maulana Mufti Rafi Usmani and Maulana Taqi Usmani and other ulema declared the suicide attack a conspiracy to create communal tensions and appealed to the people to maintain  unity and harmony, the ulema and religious leaders of other sects should also understand the conspiracy of America instead of hurling allegations against each other and creating an atmosphere of doubt, and ensure the safety of the sacred places and the Islamic Republic of Pakistan from the curse of suicide attacks by uniting on the one-point agenda of throwing America out of the country. Until thousands of American soldiers and intelligence officials spread far and wide in the country are thrown out of the country, this anarchy will go on. The religious leadership and religious and political groups have to come on a single platform to get America out of Pakistan.

To achieve this lofty goal, Hadhrat Maulana Fazlur Rehman and his party will have to sacrifice power. It is not possible for the Maulana to call people for the movement while continuing in the government formed by America. On the contrary, this paradox will only damage the Maulana’s dignity and the credibility of his party.

Source: Akhbar-e-Mashrique, New Delhi

URL: https://newageislam.com/urdu-section/explosion-on-the-shrine-of-hazrat-abdullah-shah-ghazi-حضرت-عبداللہ-شاہ-غازیؒ-کی-درگاہ-پر-دھماکہ/d/3585

بلال احد

اسلام اور اسلامی تہذیب کی اساس صداقت اور شجاعت سے عبارت ہے۔ وہ اپنے نظریات حریفوں کو کھلے عام چیلنج کرتی ہے اور بیچ میدان میں مردانہ وار مقابلہ کرتی ہے۔ اسلامی تہذیب کیونکہ حق وصداقت پر مبنی ہے ، اس لئے طاغوت کے خلاف نظریاتی کشمکش میں شکست کا کوئی تصور سرے سے موجود ہی نہیں ۔ جیت گئے تو کیا کہنا، ہار ے بھی بازی بات نہیں’’ کے مصداق شہید اور غازی کے اعزاز کیلئے اسلامی تہذیب کے پیروکار ہمیشہ اور ہر دور میں مستعد نظر آئے ہیں جبکہ استعمار اور استعماری تہذیب کی بنیاد اور پوری تاریخ کذب ،فریب اور بزدلی سے سیاہ ہے کیونکہ اسکی کوئی نظریاتی اساس سرے سے ہے ہی نہیں اور اگر ہے تو وہ بھونڈی اور کھوکھلی ہے، اس لئے وہ سازشوں اور بزدلی کا کمزور سہارا لیتی ہے، چنانچہ اس کے حصے میں ہمیشہ ذلت ورسوائی ہی آتی ہے ، نوآبادیاتی دورسے لیکر آج تک استعماری طاقتیں اسلام، اسلامی تہذیب اور اس کے پیروکار وں کے خلاف سازشوں اور بزدلانہ حربوں و ہتھکنڈوں کے استعمال کے ذریعہ اپنے وجود کی بقا کیلئے آخری اور فیصلہ کن جنگ میں مصروف ہیں، جبکہ قرآن یہ بتارہے ہیں کہ اس فیصلہ کن کشمکش کا انجام بالآخر استعمار کی عبرتناک شکست ہے۔

کراچی میں معروف مبلغ اسلام حضرت عبداللہ شاہ غازیؒ کے مزار کے احاطے میں جمعرات 7اکتوبر کی شام خود کش حملہ اور اس حملے میں دوکمسن بچوں سمیت چھ افراد کی شہادت اور درجنوں زخمیوں کا سانحہ بھی استعماری طاقتوں کی سازش اور بزدلانہ کارروائی ہے جس کا واحد ہدف یہ ہے کہ پاکستان میں امریکہ کے خلاف نفرت اور غم وغصہ کا رخ مسلمانوں کے مختلف مسالک کے درمیان فرقہ وارانہ تصادم کی جانب موڑ دیا جائے۔حضرت عبداللہ شاہ غازیؒ کے مزار کے احاطے میں خود کش حملہ اور اس سے صرف دوروز قبل جامعہ ہنوریہ سائٹ کے شیخ الحدیث مولانا امین الرحمٰن کی ٹارگیٹ کلنگ دیوبندی اور بریلوی تصادم کی ناپاک سازش ہے۔ امریکی ایجنٹ محرم الحرام میں عاشورہ اور چہلم میں بم دھماکوں کےذریعے شیعہ سنی فساد کرانے میں ناکام ہوگئے تو انہوں نے طالبان کی آڑ میں بریلویوں کو دیوبندیوں کے خلاف صف آرا کرنے کیلئے داتا دربار لاہور اور کراچی میں عبداللہ شاہ غازیؒ کی درگاہوں کو نشانہ بنایا۔

حضرت عبداللہ شاہ غازیؒ کے مزار کے احاطے میں ہونے والے خود کش حملے کے بعد کراچی سمیت سندھ اور ملک کے دیگر حصوں میں حالات کشیدہ ہوگے ۔کراچی، حیدرآباد اور سکھر میں فائرنگ ،گاڑیوں کونذر آتش کرنے اور بازاروں کو بند کرانے کے واقعات سامنے آئے ۔خود کش حملہ کے خلاف ردعمل اور متاثرین سے اتحاد ویکجہتی فطری اور انسانی اقدار کے عین مطابق عمل تھا لیکن صوبائی حکومت نے جو اقدامات کئے اس سے اس کی غیر صوبائی حکومت نے جو اقدامات کئے اس سے اس کی غیر سنجیدگی کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔ صوبائی وزیر داخلہ ڈاکٹر ذوالفقار مرزا کے حکم پر محکمہ اوقاف نے کراچی میں واقع پچیس سے زائد مزارات اور درگاہوں کو غیر معینہ مدت کیلئے سیل کردیا اور زائرین کی آمد ورفت پر پابندی عائد کردی۔

وزیر داخلہ کا یہ فیصلہ یقیناً ایک مسلک کے پیرو کاروں کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے کے مترادف تھا اور یہ اقدام خود کش حملوں کا حل بھی نہیں تھا، چنانچہ صوبائی حکومت کے اس بھونڈے فیصلے کی تمام مسالک کے رہنماؤں اور سیاسی لیڈروں نے مذمت کی اور مطالبہ کیا کہ صوبائی حکومت امن وامان اور شہریوں کے جان ومال کی حفاظت اور مقدس مقامات کے تحفظ کو یقینی بنائے ، لیکن امرواقع یہ ہے کہ سندھ کی صوبائی حکومت ہو یا وفاقی حکومت اور اس کے اتحاد ی(اے این پی، ایم کیو ایم اور جے یو آئی ایف) انہیں عوام اور ملک کا مفاد عزیز نہیں ہے۔ پیپلز پارٹی اور اس کی اتحاد ی جماعتیں اقتدار اور اختیارات کو محض ذاتی اور گروہی مفادات کیلئے استعمال کررہی ہیں۔سندھ میں متحد ہ قومی موومنٹ اور سرحد میں عوامی نیشنل پارٹی پیپلز پارٹی کے ساتھ مل کر نہ صرف ریاستی وسائل کی لوٹ مار میں مصروف ہیں بلکہ امریکہ کے تنخواہ وار ایجنٹوں کا بھی کردار ادا کررہی ہیں۔صوبے اور وفاق میں برسر اقتدار ٹولے کی تین سالہ کار کردگی صفر ہے، بلکہ ان کے وجود نے عوام کی زندگی اجیرن کردی ہے اور ملک کی سلامتی کو داؤ پر لگا دیا ہے۔اس لئے عوام اور ملک کی بقا اسی میں ہے کے امریکی منصوبے اور ایجنڈے کے مطابق بننے والی موجودہ حکومت سے نجات حاصل کی جائے اور ملک کی باگ ڈور امریکی ایجنٹوں کے بجائے عوام کے حقیقی نمائندوں کے حوالے کی جائے۔

جیسا کہ حضرت عبداللہ شاہ غازیؒ کی درگارہ کے احاطے میں ہونے والے خود کش حملے کو مولانا  مفتی رفیع عثمانی اور مولانا مفتی تقی عثمانی سمیت دیگر علما نے فرقہ وارنہ فسادات کی سازش قرار دیتے ہوئے عوام سے اتحاد و یکجہتی کی اپیل کی ہے، اسی طرح دیگر علما ئے کرام اورتمام مسالک کے مذہبی رہنماؤں کو بھی چاہئے کہ وہ ایک دوسرے پر الزام تراشی اورشکوک وشبہات پیدا کرنے کے بجائے اسلام، مسلمان اور پاکستان کے سب سے بڑے دشمن امریکہ کی سازشوں کو سمجھیں اور ملک سے امریکہ کو نکالنے کے ایک نکاتی ایجنڈے پر متحد ہوکر بم دھماکوں اور خود کش حملوں کے عذات سے مقامات مقدسہ اور ملت اسلامیہ پاکستان کو محفوظ بنائیں۔ جب تک امریکہ اور اس کے ہزاروں کی تعداد میں ملک بھر میں پھیلے ہوئے فوج اور خفیہ ایجنسیوں کے اہلکاروں کو ملک سے باہر نکلا جاتا یہ بدامنی کا سلسلہ جارہی رہے گا۔ پاکستان سے امریکیوں  کو نکالنے کیلئے علما کرام اور دینی وسیاسی جماعتوں کو بہر حال ایک پلیٹ فارم پر جمع ہونا ہوگا ۔ اس عظیم اور مقدس مقصد کیلئے حضرت مولانا فضل الرحمٰن اور ان کی جماعت کو اقتدار کی قربانی دنیا ہوگی ۔ یہ ممکن نہیں ہے کہ مولانا صاحب امریکہ کے خلاف تحریک کےلئے جمع کریں بلکہ اس تضاد سے مولانا کا وقار اور ان کی جماعت کی ساتھ متاثر ہوگی۔

URL for this article:

https://newageislam.com/urdu-section/explosion-on-the-shrine-of-hazrat-abdullah-shah-ghazi-حضرت-عبداللہ-شاہ-غازیؒ-کی-درگاہ-پر-دھماکہ/d/3585

 

Loading..

Loading..