New Age Islam
Fri Sep 30 2022, 08:29 PM

Urdu Section ( 16 Jan 2011, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Religious Teachers of Madarsas and Their Responsibility دینی مدارس کے اساتذہ کا سماجی رول

By Waris Mazahari

(Translated from Urdu by Raihan Nezami, NewAgeIslam.com)

A deep introspection into numerous social aspects is required to bring about religious and cultural awareness among the Muslim community. An important point for consideration in this regard is the role of the Madrasa teachers in social reform. Madrasas are a quintessential part of the Muslim culture and play an important role in the education and dissemination of Islamic teachings among the common masses. The places where madrasas do not exist are obviously in the darkness of illiteracy and ignorance. Some irresistible powers are afraid of the awareness in Muslim society, so they keep on trying to destroy this most important educational system. Therefore, hundreds of Muslim educational institutions have been closed in Egypt, Yemen and other Arab countries or their syllabi have been altered destroying the very basic purpose of their existence. Madrasas have been successful in their mission of imparting religious education to the common masses in the face of opposition.

The madrasas should strive to reform the Muslim community and spread the light of true knowledge among them. The defects in the society are numerous which need immediate attention. For this purpose, the role of madrasas should be clearly defined. Now the question arises: what role should madrasa teachers play for the improvement of the society?

A majority of madrasa educated students who become madrasa teachers carry out the same monotonous jobs. That should not be considered their limit of functioning. Their role in the duties of social rehabilitation must be designed and assigned. Teaching is one of the many aspects of their social role, which they perform as a robot, as is the case in various modern educational institutions. If they only repeat the same lessons taught to them by their predecessors, the nursery of Islamic education will remain cut off from the outer world.

A journalist Celia W. Dugger wrote in New York Times that a certain madrasa gives a lot of importance to piety while teaching various Fiqhi book - full of lessons on cleanliness. But, there is no impact of this teaching in practical life. A sincere analysis will, obviously unfold the tragic situation in the environment of madrasas regarding hygiene, piety and cleanliness. The teachers who are imparting knowledge are solely responsible for the nourishment of the young generations being trained there.

To a great extent, their responsibility is more than that of their parents as the students pass ten to twelve precious years in their company learning the practicality of life. They should be trained in such a way, when they grow mature, they should be able to shoulder the responsibility of reformation of the Muslim society. Apart from this primary duty, they should be trained to realize and identify the good and bad qualities of the community members. It will enable them to take appropriate action for their betterment.

Different teachers perform different activities for the society. Some of them deliver lectures on demand, and others give pen-service. It is also good, but it should not be restricted to this much only as they are made for performing more important duties. They should take initiative for the removal of vices in the Muslim culture with the help of local people in their own locality.

In the light of the proverb, “Charity begins at home”, all Islamic scholars too, began their mission from their home. Such Islamic scholars have greater reach among masses as they become closer by dint of lectures and religious sermons. The rest of the teachers, who are more resourceful and effective, are confined to the world of class rooms, mosques and their abodes. If they come out with a little openness of mind to help the society in their struggle for survival, the society can benefit extraordinarily. The corrective measures of Tablighi Jam’at are more effective as they reach far and wide and visit the people at their homes ignoring the disconcerting remarks and behaviours to accomplish their mission. In my opinion, there should be a Community Reformation Committee in all the Muslim areas comprising madrasa teachers and local inhabitants – old or young, especially qualified and cultured people. Tablighi Jam’at has greatly benefitted from the scholars of modern science and subjects. The Tablighi errand is a significant factor in the exemplary success of their mission; it is considered an individual duty of every member irrespective of age, class or status.  

This pattern of functioning is required for the reform and education of the Muslim masses. The work field can be extended to other castes also, as some issues are quite common in the society which requires diligent attention. The madrasa teachers will be more effective as they are non-political people. It is commonly known that political leaders hijacked Islamic heads of different religious organizations captive irrespective of whether they are Islamic scholars or general intellectuals. In case, their teaching assignments are being hampered, the number of teachers can be increased to make them available for social duties.

In certain madrasas, there are some scholars appointed for this purpose, but they are simply good orators. In fact, this criterion is wrong; a person of ordinary merit can also be a good orator. The real criterion should have been the zest for social awareness and Islamic reform. The selection of the people should be done from this point of view as missionary zeal is the most important requirement.

Islamic education and cultural reform should go hand in hand. Social welfare initiatives are considered to be an integral part of teaching. At first, the topics for reformation should be finalized as there is a lot of contradiction among the people. The Islamic preachers concentrate upon various topics such as: suppression of women’s rights, misuse of divorce (Talaq), deprivation of women’s rights to property, stigma of dowry, domestic violence or non-Islamic practices etc. These topics are not so important as to be given the sole attention.

First of all, Muslim community should learn self-criticism or self-introspection. Only then the moral character can be improved.  The Muslims lack in self-realisation making themselves unable to realize the vices of their culture and society. The present Muslim society is worse than others in its practice of moral values, truthfulness, cleanliness, decent behaviour, politeness, good behaviour with neighbours and religious pluralism.

The statement of a Pakistani writer needs deep consideration: “The Muslims could not even adopt good behaviour practiced by the non-Islamic communities for centuries, so the practice of universal justice of Islam as practiced by Khilafat-e-Rashideh is out of question”. -- Manzoorul Hasan, Ashraque monthly, Lahore, Oct. 2002)

It seems there is an absence of individual or collective structure of behaviour in our society. People have been practicing some hypocritical norms in the name of religion. They give no importance to the practice of moral values and cultural uplift of an individual which are basic things. In the absence of these factors, no plan or strategy for the improvement of the social character can be successful. It needs deep introspection and should be rectified before any other action taken.

The madrasa teacher can be very effective in this mission of purification of the community, only if they realise the fact that their social and Islamic utilities are not limited to imparting the scholarly knowledge within the boundary of madrasas. They can help their fraternity in numerous ways.

Source: Hamara Samaj, New Delhi

URL: https://newageislam.com/urdu-section/religious-teachers-madarsas-their-responsibility/d/3948


نذیر ناجی

ایسا کوئی طریقہ میری سمجھ میں نہیں آرہا جسے اختیار کر کے میں اپنے دل کی بات لکھ سکوں ۔ لکھتے ہوئے بھی الفاظ کے چناؤ میں وقت پیش آرہی ہے کہ سلمان تاثیر کے خلاف کسی ایک گواہ نے بھی نافذ العمل قانون 295-Cکے تحت ایف آئی آر درج نہیں کرائی تھی۔ کسی عدالت میں ان کا مقدمہ نہیں  گیا تھا۔ کسی جج نے سزا نہیں دی  تھی ۔ اس کے باوجود ایک ہجوم ہے جو انہیں گستاخ رسولؐ قرار دے کر ایک مہم کو آگے بڑھا رہا ہے۔ گزشتہ روز علما کرام نے جو تقریر کیں، ان میں یہ انتباہ کیا گیا کہ 295-C میں ترمیم کی جرأت نہ کی جائے۔ جس ترمیم کا ذکر ہورہا ہے ، وہ پارلیمنٹ کے ا ندر پیش ہی نہیں ہوئی۔ یہ خبریں بھی آچکی ہیں کہ اسے دخل دفتر کردیا گیا ہے اور اسے اسپیکر کا عملہ زیر غور بھی نہیں لائے گا۔ مگر دھمکیوں کا سلسلہ جاری ہے۔ کل وزیر اعظم نے اعلان کردیا کہ ترمیمی بل پیش کرنے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتے ۔ سیاسی اصولوں اور پارلیمانی ضابطوں کے تحت ترمیم کا قصہ ختم ہوچکا ہے لیکن احتجاجی تحریک جاری ہے۔ جن لوگوں کا یہ موقف ہے کہ سلمان تاثیر گستاخی رسول ؐ کے مرتکب ہی نہیں ہوئے تھے ،ان کے بیانات کی اشاعت ہی ممنوع ہوچکی ہے۔یہی لکھنے والو ں کا حال ہے۔ ان کے بتصرے شرمندۂ اشاعت کے نام پر سیاست کی روایت نئی نہیں ۔ آزادی کے فوراً ہی بعد قرار داد مقاصد کو آئین کا حصہ بنانے کے مطالبے شروع ہوگئے تھے ۔ اسی وقت سے حکمراں قوتیں مذہبی سیاستدانوں سے ڈرنے لگے تھیں ۔ حالانکہ تحریک آزادی کے دوران مسلم لیگ نے ایسے لوگوں کو شکست دے کر پاکستان حاصل کیا تھا۔

مذہب کے نام پر سیاست کرنے والے بے حوصلہ ہوچکے تھے اور پاکستانی سیاست میں ان کےلئے کوئی جگہ نہیں بن رہی تھی ۔مگر بقول الطاب گوہر مرحوم ‘‘نہ جانے کیوں ہم لوگ (بیورو کریسی اور سیاست داں)شکست خوردہ مذہبی سیاست دانوں سے ڈر نے لگے تھے ۔ ہم کوئی بھی فیصلہ کرتے ہوئے ،یہ سوچا کرتے کہ مولوی حضرات کا رد عمل کیا ہوگا ؟’’ اس حوالے سے الطاب گوہر ایک واقعہ بھی سنایا کرتے۔ جو یہ تھا‘‘جب پاکستان کی کرنسی جاری کرنے کی تیاریاں شروع ہوئیں ،تو نوٹوں او رسکو ں سے ڈیزائن تیار ہونے لگے۔ مختلف ڈیزائن بن کر آتے اور ہم انہیں دیکھنے کے بعد ترمیم واضافے کے مشورے دے کر دوبارہ ڈیزائن بنواتے ۔ خود مصور بھی اپنے ذہن میں باور کر بیٹھے تھے کہ کرنسی پر کسی انسان کی تصویر نہیں ہوگی۔ ایک دن ڈیزائن منتخب کرنے والی کمیٹی کی تصویر چھاپی جائے۔ جس پر ایک آواز اٹھی کہ اس پر مولوی شور مچائیں گے ۔ مگر کمیٹی کے دوسرے اراکین کو تجویز پسند آچکی تھی۔ متفقہ فیصلہ یہ ہوا کہ قائد اعظم کی تصویر چھاپی جائے گی، لیکن ہمارے ہی بیورو کریٹ ساتھی خدشات کا اظہار کرنے لگے کہ اس پر مولویوں کا رد عمل شدید آئے گا۔ مگر تب اتنا خوف نہیں ہوتا تھا۔ (یہ بات وہ جنرل ضیا کے زمانے میں کررہے تھے) فیصلے پر عملدرآمد کر کے پاکستان کے کرنسی نوٹ جاری کردیئے گئے ۔ہمارے خدشات کے مطابق کوئی خاص رد عمل نہیں ہوا ۔ جو ایک دو آوازیں اٹھیں، ان سے کسی نے اثر نہیں لیا اور نوٹ بازار میں آگئے۔ ہماری توقعات کے برعکس مولوی حضرات بھی دوسروں کی طرح وہی نوٹ کمانے کی دوڑ میں شامل ہوگئے اور اب تک ہیں۔’’

مذہبی سیاستداں اپنی دھن کے پکے نکلے اور وہ اپنے تصور کے مطابق نفاذ اسلام کی جدوجہد کے نام پر سیاست کرتے رہے ۔حیرت کی بات ہے کہ نفاذ اسلام کا نعرہ سب سے پہلے جنرل یحییٰ خان کے دور حکومت میں انتخابی سیاست کا حصہ بنا۔ یحییٰ خان کے وزیر اطلاعات نواب زادہ شیر علی خان نے اس نعرے کے حق میں فضا ہموار کرنے کے لئے ایک نئی وزارت بنوائی اور میڈیا پر چھاگئے ۔ تب لگتا تھا کہ مذہبی جماعتیں بڑی تعداد میں اسمبلیوں کے اندر آئیں گی۔ اس وقت میڈیا کابڑاحصہ قومی اسمبلی میں عوامی لیگ کو 36سیٹیں دے رہا تھااور پیپلز پارٹی کے لئے پندرہ بیس سیٹوں کے اندازے لگائے گئے تھے ۔مگر جب انتخابی نتائج آئے، اسلام کے نام پر ووٹ مانگنے والوں کا صفایا ہوگیا۔ بھٹو صاحب اچھی طرح ایک موثر اور مستحکم حکومت چلارہے تھے۔ مذہبی سیاستدانوں کے ایک چھوٹے سے گروہ نے احمدیوں کے خلاف تحریک شروع کی۔ خدا جانے بھٹو صاحب کو کیا سوجھی کہ ا نہوں نے پہلی مرتبہ کسی جمہوری ملک کے آئین میں شہریوں کے مذہب کے بارے میں فیصلہ دے دیا کہ کون مسلمان ہے اور کون نہیں ہے؟بھٹو صاحب کی اس پسپائی سے حوصلہ پاکر ان کے خلاف جو سیاسی اتحاد قائم کیا گیا ، اس کا نعرہ نظام مصطفیٰ کا نفاذ بنا ۔مگر 1977کے انتخاب میں بھی مذہبی سیاستداںشکست کھا گئے ۔ جو قوتیں پاکستان کو مذہبی ریاست بنانے پر تلی تھیں ان کی سرپرستی کے لئے ضیا الحق آگئے آئے اور اقتدار پر قبضہ کرلیا۔ اس فوجی آمر نے 11سال تک اسلام کے نام پر اپنی آمریت چلائی اور اس دوران مذہبی سیاست کرنے والوں کو اقتدار اور اسٹیبلشمنٹ کے ڈھانچے میں مؤثر اور طاقتور بنادیا گیا۔ افغانستان کی پہلی جنگ جو سوویت یونین کے خلاف شروع ہوئی تھی ،اس میں بھی اسلام کے نعرے سے کام لیا گیا اور امریکیوں نے پیسہ اور اسلحہ دے کر مجاہدین کی مدد کی۔پرویز مشرف روشن خیالی کے دعووں کے باوجود انہی طاقتوں کو مضبوط کرتے رہے، جو ضیا الحق کی حامی تھیں ۔مگر بحالی جمہوریت کی تحریک کی کامیابی کے بعد جب انتخابات ہوئے تو مذہبی سیاسی جماعتیں بری طرح ہاریں ۔

1970میں ہمارے معاشرے کے اندر بیرونی ملکوں کی طرف سے اپنے اپنے حامی مذہبی سیاستدانوں کو سرمایہ فراہم کرنے کا سلسلہ شروع ہوا اور مسلح فرقہ وارانہ گروپ تشکیل پانے لگے ۔ ان کی افرادی قوت کا بڑا ذریعہ وہ پاکستانی مجاہدین بنے جو افغانستان میں گوریلا جنگ لڑ چکے تھے ۔ اس کے بعد شیعہ اور سنی فرقوں میں باہمی خونریزی کا سلسلہ شروع ہوگیا، جو ابھی تک جاری ہے۔ آزادانہ انتخابات کے تجربات کو سامنے رکھتے ہوئے مذہبی سیاستداں جان گئے تھے کہ وہ عوامی پارٹیوں کے مقابلے میں کامیاب نہیں ہوسکیں گے۔ چنانچہ پھر اکٹھے ہونا شروع ہوگئے ہیں اور جب مولانا فضل الرحمٰن نے حکومت سے علٰیحدگی اختیار کر کے تحفظ ناموس رسالت ؐ کے نعرے کو بنیاد بنا کر انتخابی میدان میں اتریں گے ۔ سلمان تاثیر کے قتل کے نتیجے میں جو مہم چلائی جارہی ہے اس کی منزل آئندہ انتخابات ہیں ۔ عام خیال یہ ہے کہ انتخابات وقت سے پہلے ہوں گے ۔قبل از وقت انتخابات میں مذہبی سیاستداں ایک نیا متحدہ محاذ بنا کر تحفظ ناموس رسالت ؐ کے نعرے پر اپنے حامیوں کو منظم اور متحرک کریں گے اور مخالفین پر فتوے لگا کر ان کے خلاف عوام کے جذبات کو ابھاریں گے۔ یہ تجزبہ 1970میں کیا گیا تھا لیکن وہ نظریاتی مباحثوں تک محدود رہا اور اسلام کا نعرہ کوئی سیاسی فائدہ نہیں دے سکا۔ اس مرتبہ نعرہ پیغمبر اسلام حضرت محمد ﷺ کی ذات پاک کے نام پر لگایا جائے گا۔ حضور ؐ کی ذات سے کلمہ گو جو اندھی عقیدت اور محبت رکھتے ہیں ، اسے سیاسی مخالفین کے لئے استعمال کیا جائے گا۔ابتدائی مناظر آپ نے دیکھ لئے ۔حربہ مؤثر ثابت ہوا۔ اب بیورو کریسی کی طاقت استعمال کر کے میڈیا کو دہشت زدہ کیا جائے گا تاکہ کوئی سیاسی جماعت مذہبی سیاستدانوں کے سامنے ٹھہر نہ سکے ۔ یکطرفہ موقف کثرت سے دہرایا جائے گا۔ دیکھئے اس مرتبہ عوام اپنے سیاسی شعور کا کس طرح مظاہرہ کرتے ہیں؟

URL: https://newageislam.com/urdu-section/religious-teachers-madarsas-their-responsibility/d/3948

Loading..

Loading..