New Age Islam
Fri Sep 18 2020, 08:32 PM

Urdu Section ( 14 Nov 2010, NewAgeIslam.Com)

There is a need to involve the Muslim polity of the country to solve Kashmir issue آج وہ کشمیر ہے محکوم و مجبور وفقیر

By Prof. Tahir Mahmood

(Translated from Urdu by New Age Islam Edit Desk)

Recently the Jamiat-e-Ulema-Hind organised a major Kashmir Conference at the Ram Lila Ground in Delhi. My name was also on the list of the speakers. In such conferences people are generally invited to express their views but once the conference starts,  certain limitations are imposed on the speakers and those transgressing the prescribed limits get a warning note which, to me,  is an insult. Though I had a lot to say on the topic but could present only some of my views in the five minutes I was given and ran away for the fear of getting the ‘letter of suspension’.

However, I am expressing my views on Kashmir in this article today. Recently the nation has commemorated the birth anniversary of one of its worthy sons whose ancestors belonged to a family of Kashmiri pandits  but destiny had decided for him to be the greatest reformer of the Muslims of this region. By this I mean the great philosopher and poet Dr Md Iqbal who spent his life calling his co-religionists towards the real Islamic teachings pulling them out of the blind alley of mindless emulation and consequently antagonised one and all. Although nowadays every Tom, Dick and Harry is a self-styled Iqbal expert but I do not have any claim to this effect and consider myself only a humble admirer of his.

I begin with one of his couplets which rightly describes the current picture of his native place:

Aaj who kashmir hai mahkoom o majbur o faqir

Kal jise ahle watan kahte the Iran-e-saghir

( The Kashmir that was once called a small Iran today stands  suppressed, helpless and impoverished)

After having enslaved the sub-continent for centuries, when the British were forced to leave the country, they not only divided it on the basis of religion but also left a thorn in the flesh of the nation by giving hundreds of independent princely states the right to self determination. Being under the rule of a non-Muslim ruler for centuries, the Muslim majority Kashmir was thrown into uncertainty. I do not want to repeat what happened later.

However, Kashmir was acceded to the Indian Republic under certain pre-conditions and the mutual agreement on the predeterrmined conditions of accession was included in the Article 370 of the Indian Constitution. Subsequently, on the one hand the ‘Islamic’ State that was carved out of the bosom of  Mother India raised a hue and cry and on the other, despite the inclusion of the conditions of accession in the Constitution, it was violated wilingly or unwillingly by India. Not only that, after a certain period it was even demanded that since the special status given to Kashmir was at the root of all problems, the Article 370 should be scrapped. This demand was synonymous with axing one’s own leg and the fact was not given a thought that shortly after the Article 370, ten consecutive Articles granted special status to Mizoram, Meghalaya, Nagaland, Arunachal Pradesh and Sikkim too.

Therefore, the growing concrerns among the Kashmiris on the rising political demand for the scrapping of the Article 370 were a natural fallout. Gradually these concerns turned into extemism and agression through childish passion and naïve youth thanks to the provocations from across the border. The result was that Kashmir jannat nazeer turned into a virtual hell. But instead of sprinkling cold water of dialogue and discussions to put out the fire, the police were given the license to shower bullets by passing special laws. The situation has come to such a sorry a passe that neither the protesters have any control over themsleves nor is their any sympathy or human feelings left in the hearts of the suppressors.

For whatever reasons, right or wrong, the lava might be  simmering in the minds of the Kashmiri youth, but if in their pursuit of making Kashmir a paradise again, they think that the two parts of Kashmir can be merged to make an independent Unified Kashmir,  they are living in the proverbial fool’s paradise. On the other hand if Pakistan believes that Kashmir can ever come under its jurisdiction, it can be termed as its pipe-dream. And our government’s hope that Muzaffarabad can some day come under it’s rule, it can only be a child’s wishful thinking. It would be wise and prudent for the Kashmiri youth to consider why they hope that they will enjoy a peaceful life and prosperity by handing themselves over to a country which could not keep itself united and was split into two merely four decades after coming into existence and whose remaining part is also a witness to rebellions and sectarian violence.

The question then is what should be done. Is doing  something really that much difficult or has it been made so due to our mutually rigid attitude. I do not understand that if the undivided Punjab can split and merge into two neighbouring countries and the united Bengal can split between India and Bangladesh why can’t it be made possible for the Kashmiris to live in peace and  harmony despite being divided by artificial borderlines like the Bengalis and the Punjabis do. If Kashmir is not made a question of political ego and is seen through the point of view of human rights, solving the issue will not a big problem. Human Rights Commissions are present on either side of the border and there is one such state  commission in Kashmir too. Why have these organisations been silent spectators to the painful situation in the Kashmir? Jamiat’s taking notice of the worsening situation in Kashmir is commendable but there is a need to rise above merely holding conferences and take some solid initiatives. Why can’t the major groups and organisations of Muslims send a team of their representatives to Kashmir to speak to their coreligionists and listen to their problems and views and to explain to them the delicacy of the situtaion and then convey their views and apprehensions to the government? And why can’t the government of India on its own initiative depend on its Muslim citizens to form a team  of their  intellectuals and academicians and give them the responsibility to hold dialogue with Kashmiri Muslims?  I have the firm belief that Muslims of the country alone can restore the Kashmiri people’s faith in India. The government is not going to achieve anything by keeping them isolated from this issue.

If the Kashmir issue is solved amicably, India and Pakistan can live in peace and harmony and the people in the whole subcontinent can heave a sigh of relief. Both the governments should revise their attitude and the religious and welfare organisations should fulfill their responsibilities on this issue. Kashmiri peope have already suffered a lot. Now they need some solace. 

Source: Rashtriya Sahara Urdu, New Delhi

URL: http://www.newageislam.com/urdu-section/there-is-a-need-to-involve-the-muslim-polity-of-the-country-to-solve-kashmir-issue--آج-وہ-کشمیر-ہے-محکوم-و-مجبور-وفقیر/d/3682

 

آج وہ کشمیر ہے محکوم و مجبور وفقیر

پروفیسر طاہر محمود

گزشتہ دنوں جمعیۃ علما ہند نے  دہلی کے رام لیلا میدان میں ‘‘کشمیر کانفرنس’’ کے عنوان سے ایک بہت بڑاجلسہ منعقد کیا، جس کے مقررین کی طول طویل فہرست میں ہمارا نام بھی شامل تھا۔ اس طرح کی کانفرنسوں میں عموماً یہی ہوتا ہے کہ پہلے تو لوگوں کو اظہار خیال کے لیے بہ اصرار مدعو کیا جاتا ہے ،مگر جلسہ شروع ہونے کے بعد ان پر دستور زباں بندی نافذ کیا جاتا ہے اور کوئی اس سے ذرا بھی تجاوز کرے تو تنبیہ کا پرچہ تھمادیا جاتا ہے، جسے کم از کم ہم تو بے عزتی مانتے ہیں، چنانچہ موضوع جلسہ پر ہمیں عرض تو بہت کچھ کرنا تھا، مگر منتظمین کے عطا کردہ 5منٹ میں چند معروضات ہی بالا ختصار پیش کرسکے اور پروانہ معطلی ملنے کے ڈر سے جلد بھاگ کھڑے ہوئے۔ بہر حال آج کے اس مضمون کے ذریعہ ہم کشمیر کے تعلق سے اپنے دل کا درد مختصراً قارئین کے گوش گزار کررہے ہیں ۔ ابھی اسی ہفتہ پورے برصغیر نے اپنے ایک نامور سپوت کا جنم دن بڑے کز وفر سے منایا ہے،جو کشمیر پنڈتوں کے ایک خانوادہ سے آبائی تعلق رکھتا تھا ، مگر جس کے لیے قدرت نے اس خطہ ارض میں مسلم سماج کا عظیم ترین مصلح بننا مقسوم کر رکھا تھا۔ ہماری مراد عظیم فلسفی سخنور ڈاکٹر سر محمد اقبال سےہے ، جنہوں نے اپنی ساری زندگی اپنے ہم مذہبوں کو اندھی تقلید کے کنویں سے نکال کر اصل اسلامی تعلیمات سے رجوع کی دعوت دیتے گزاری تھی اور اس کی سزا میں ‘‘ اپنے بھی خفا مجھ سے ہیں بیگانے بھی ناخوش ’’کی پاداش جھیلی تھی۔ یوں تو آجکل ہمارے یہاں جسے دیکھئے جب چاہے بزعم خود ماہر اقبالیات بن بیٹھتا ہے ،مگر ہمیں اپنے متعلق ایسی کوئی غلط فہمی مطلق نہیں ہے اور ہم خود کو علامہ کے معجز انہ کلام کا ایک ادنی ٰ خوشہ چیں ہی سمجھتے ہیں۔ بہر حال موقع کی مناسبت سے ہم اپنی بات علامہ ہی کے ایک شعر سے شروع کررہے ہیں، جو آج ان آبائی وطن کے حال زاری پر پوری طرح صادق آتا ہے:

آج وہ کشمیر ہے محکوم ومجبور وفقیر

کل جسے اہل نظر کہتے تھے ایران صغیر

ہندوستان کو صدیوں تک غلام بنائے رکھنے کے بعدجب انگریز بالآخر ملک چھوڑ نے پرمجبور ہوئے تو انتقاماً ہندوستانیوں کو مذہب کی بنیاد پر تقسیم وطن کا ناسور تو دیے ہی گئے ،ساتھ ہی برصغیر کی سیکڑوں چھوٹی بڑی خود مختار ریاستوں کو مصنوعی سرحد کے آر یا پار جانے کا اختیار دے کر ایک شوشہ اور چھوڑ گئے۔برسوں سے غیر مسلم حاکم کے زیر نگیں مسلم اکثریتی ریاست کشمیر اس طور پر ایک بڑی کشمکش میں مبتلا ہوگئی۔ اس کے بعد کیا ہوا یہ تاریخ ہم دوہرا نا نہیں چاہتے ، لیکن بہر حال کشمیر کا جمہوریہ  ہند کے ساتھ مشروط الحاق ہوا اور آپس میں طے کردہ شرائط کو دستور ہند کی دفعہ 370میں قلمبند کردیا گیا۔اس پر ایک طرف مادر وطن کا سینہ چیر کے زبردستی بنائی گئی ‘اسلامی’ ریاست نے واویلا مچایا اور دوسری طرف ہندوستان کی طرف سے شرائط الحاق کو دستور میں تسلیم کرنے کے باوجود یہاں ان کی دانستہ یا نادانستہ اندیکھی ہونے لگی اور کچھ عرصہ بعد ہی شور مچنے لگا کہ کشمیر کا  دستوری اختصاص ہی وہاں  کے تمام مسائل کی جڑ ہے ، اس لیے دفعہ 370کو دستور سے حذف کیا جائے، اگر چہ یہ مطالبہ جس شاخ پر آشیانہ بنایا گیا تھا، اسی کو کاٹ کر پھینک دینے کی فرمائش کے مترادف تھا اور یہ دیکھنے کی بھی کبھی زحمت نہیں کی گئی کہ آخر دستور ہی میں دفعہ 370کے معاً بعد دس متواتر دفعات میں میزورم ،میگھالیہ ،ناگا لینڈ ،اروناچل پردیش اور سکّم سمیت ملک کی کئی اور ریاستوں کے لیے بھی تو مخصوص تجاویز شامل ہیں۔ بہر حال کشمیر کا دستوری تخصص ختم کیے جانے کے بڑھتے ہوئے سیاسی مطالبات سے کشمیریوں کا اپنے مستقبل کی طرف سے تشویش میں مبتلا ہونا فطری تھا۔ آہستہ آہستہ یہ تشویش جوانی کی نادانیوں اور طفلا نہ جوش کے راستوں سے ہوتی ہوئی سرحد پار سے مسلسل دلائے جارہے اشتعال کی بدولت انتہا پسند ی اور جارحیت میں تبدیل ہونے لگی اور نوبت یہاں تک پہنچی کہ ‘‘جنت کشمیر میں دوزخ کے نظارے رکھیں’’کی منزل آگئی ،لیکن آگ بجھانے کے لیے افہام وتسکین کے ٹھنڈے پانی کی چھیٹیں مارنے کی بجائے خصوصی قوانین پاس کر کے پولس کو گولیوں کی بوچھار یں کرنے کی کھلی چھوٹ دے دی گئی اور اب تو یہ حال ہے کہ نہ احتجاجیوں کو خود پر قابو باقی رہ گیا ہے نہ انہیں پسپا کرنے والوں کے دلوں میں کوئی درد اور پاس انسانیت۔

کشمیر ی نوجوانوں کے دلوں میں صحیح یا غلط کسی بھی وجہ سے خواہ کتنا ہی لاوا کیوں نہ پک رہا ہو، وہ اگر اپنے وطن کو پھر سے جنت نظیر بنانے کی دھن میں یہ سمجھتے ہیں کہ کشمیر کے دونوں حصوں کو ملا کر کبھی کوئی آزاد ریاست بن سکتی ہے تو یہ انگریزی سے محاورہ کے بموجب احمقوں کی جنت میں رہنے کے مترادف ہے۔ ادھر پاکستان اگر اس خام خیالی میں مبتلا ہے کہ سرینگر کبھی اس کی عملدار ی میں شامل ہوسکتا ہے تو اسے شیخ چلی کا منصوبہ ہی کہا جاسکتا ہے اور ہماری حکومت کا یہ خیال کہ مظفر آباد کبھی اس کے زیر اقتدار آسکتا ہے آسمان سے تارے توڑ کر لانے کی بال ہٹ سے زیادہ کچھ نہیں ہے اور کشمیری نوجوانوں کے لیے دانشمندی او ردور اندیشی سے سوچنے کی بات یہ ہے کہ جو ملک خود اپنے کو متحد نہ رکھ سکا اور عالم وجود میں آنے کے چوتھائی صدی کے اندر خود کو دوملکوں میں تقسیم کر بیٹھا جس کے بچے کھچے حصہ میں بھی علاقائی بغاوتوں او رمسلکی تشدد کا سلسلہ جاری ہے اور جہاں پائیدار جمہوریت کبھی قائم ہی نہ ہوسکی خود کو ایسے ملک کے حوالے کرکے یہ لوگ اپنے لئے پر امن زندگی اور دودھ کی نہروں کی امیدیں کس بوتے پر باندھے ہوئے ہیں۔

سوال یہ ہے کہ پھر آخر کیا کیا جائے ،مگر کچھ کرسکنا کیا واقعتاً اتنا محال ہے جتنا کہ اسے آپسی ضد سے بنادیا گیا ہے؟ ہماری سمجھ میں نہیں آتا کہ اگر غیر منقسم پنجاب دو آب اور سہ آب بن کر دو پڑوسی ملکوں میں الگ الگ سما سکتا ہے اور کل کا متحدہ بنگال ہندوستان اور بنگلہ دیش کے بیچ تقسیم ہوسکتا ہے تو کشمیر کی موجودہ صورتحال کو آپسی بات چیت کے ذریعہ قانونی شکل دے کر کشمیریوں کے لیے پنجابیوں اور بنگالیوں کی طرح مصنوعی سرحدوں میں بٹ کر بھی آپسی میل ملاپ سے امن وامان کی زندگی گزارنا کیوں ممکن نہیں بنایا جاسکتا ۔کشمیر کو اگر سیاسی انا کا سوال نہ بنایا جائے اور اس کے موجود ہ حالات کو  صرف حقوق انسانی کے چشمہ سے دیکھا جائے تو اس ملہ ک کا حل کرلینا کچھ زیادہ مشکل نہیں ہے۔ سرحد کے دونوں طرف قومی حقوق انسانی کمیشن بنے ہوئے ہیں، خود کشمیر میں بھی ایسا ہی ایک صوبائی کمیشن موجود ہے، یہ سب تنظیمیں کشمیر کے دردناک حالات کی خاموش تماشائی کیوں بنی ہوئی ہیں؟ جمعیۃ علما ہند کا کشمیر کی ابتر صورت حال کا نوٹس لینا لائق تحسین ہے، مگر ضرورت کا نفرنسوں کے انعقاد سے آگے بڑھ کر کچھ ٹھوس عملی اقدام کرنے کی ہے۔مسلمانوں کی بڑی جماعتیں اور تنظیمیں اپنے چنندہ نمائندوں کی ایک ٹیم بنا کر کیوں کشمیر نہیں بھیج سکتیں کہ وہا ں جاکر اپنے ہم مذہبوں سے بات کرکے انہیں مسئلہ کی نزاکتیں اور نشیب وفراز سمجھائیں اور ان کا دکھ درد انہیں کی زبان سے براہ راست سن کر حکومت تک پہنچا ئیں اور خود حکومت ہند اس معاملہ میں اپنے مسلمان شہریوں پر اعتماد کر کے ان کے دانشوروں او راہل خرد پر مشتمل کوئی بڑا وفد بنا کر اسے کشمیری مسلمانوں سے گفت و شنید کی ذمہ داری کیوں نہیں سونپ سکتی؟ ہمیں پورا یقین ہے کہ کشمیر یوں میں ہندوستان کے لیے اعتماد پیدا کرنے کا کام اس ملک کے مسلمان ہی کرسکتے ہیں ، انہیں اس مسئلہ سے بالکل الگ تھلگ رکھ کر حکومت کو کچھ حاصل نہیں ہونے والا۔

کشمیر کا مسئلہ ٹھنڈے دل ودماغ سے حل کرلیا جائے تو ہندوستان و پاکستان شیر وشکر ہوکر رہ سکتے ہیں او رپورے بر صغیر میں لوگ چین کی نیند سوسکتے ہیں۔ دونوں طرف حکومتوں کو اب اس جانب اپنا رویہ بدلنا چاہئے اور دونوں ملکوں کے عوام اور ان کی دینی اور فلاحی تنظیموں کو اس سلسلہ میں اپنی ذمہ داری نبھانی چاہئے۔ کشمیری عوام ظلم وتشدد کی مار بہت جھیل چکے ‘‘ اب ان کی تیرہ نصیبی چراغ چاہتی ہے ’’۔ خود کشمیر یوں کو بھی اپنے لیے علامہ اقبال کا یہ خراج تحسین اور ترد دیاد کر کے اس چراغ کو جلانے اور جلائے رکھنے میں بھرپور تعاون دینا چاہئے کہ:

آہ یہ قوم نجیب وچرب دست وتر دماغ

ہے کہاں روز مکافات اے خدائے داروگیر

بشکریہ روزنامہ راشٹریہ سہارا ، نئی دہلی

syedtahirmahmood@hotmail.com

URL for this article:

http://www.newageislam.com/urdu-section/there-is-a-need-to-involve-the-muslim-polity-of-the-country-to-solve-kashmir-issue--آج-وہ-کشمیر-ہے-محکوم-و-مجبور-وفقیر/d/3682

 

Loading..

Loading..