New Age Islam
Sat Jul 11 2020, 03:40 AM

Islamic Ideology ( 18 March 2020, NewAgeIslam.Com)

Comment | Comment

Coronavirus Outbreak: Precautions Suggested By WHO Are Identical With Islamic Prescriptions



By Ghulam Ghaus Siddiqi, New Age Islam

19 March 2020

Coronavirus is a contagious disease similar, in becoming pandemic, to the Plague of Taun taking place before and after Islam. The World Health Organization declared the coronavirus outbreak a pandemic. WHO Director-General Tedros Adhanom Ghebreyesus said, “If countries detect, test, treat, isolate, trace and mobilize their people in the response, those with a handful of novel coronavirus cases can prevent those cases becoming clusters, and those clusters becoming community transmission”. Approximately similar precautionary measure was the guidance of the Prophet of Islam to deal with the Plague of Taun, with only difference that the Science had then not developed.

Pandemics have been a part of human history for centuries. Taun was the plague of the same contagious disease affecting the people in times of the Prophet Muhammad (peace be upon him). This plague was then treated with precautionary isolation. It is reported by Sa’ad that the Prophet Muhammad (peace and blessings be upon him) said,

عَنْ سَعْد عَنْ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّهُ قَالَ إِذَا سَمِعْتُمْ بِالطَّاعُونِ بِأَرْضٍ فَلَا تَدْخُلُوهَا وَإِذَا وَقَعَ بِأَرْضٍ وَأَنْتُمْ بِهَا فَلَا تَخْرُجُوا مِنْهَا

Translation: “If you hear of a plague in a land, then do not go into it. If it happens in land where you are, then do not go out of it.” (Source: Sahih al-Bukhari 5396, Sahih Muslim 2218)

'Amir b. Sa'd reported that a person asked Sa'd b. Abu Waqqas about the plague (Taun), whereupon Usama b. Zaid said: I would inform you about it. The Messenger of Allah (peace be upon him) said: It is a calamity or a disease which Allah sent to a group of Bani Isra'il, or to the people who were before you; so when you hear of it in land, don't enter it and when it has broken out in your land, don't run away from it. (Sahih Muslim 5497)

In another hadith, the Prophet is reported to have said that it (the plague of Taun) is a God-sent punishment from the calamity or from the remnant of the calamity with which people were afflicted before you. So when it is in a land and you are there, don't get out of it, and if (this news reaches you) that it has broken out in a land, then don't enter therein….” (Sahih Muslim 5501)

The Prophet’s guidance on preventing contagious diseases and enforcing quarantine also becomes clear from the hadith that the Prophet (peace be upon him) said, «لا يُوردَنَّ مُمرض على مصخ«  which means “a healthy person should not be brought near a sick person” (Source: Abu Dawud, Ahmad, Ibn Majah, Al-Bayhaqi)

The traditional interpretation of these Ahadith includes several points; the people should not depart from the land afflicted by the plague, 1) as they can’t avoid Allah’s appointed destiny, and 2) if the afflicted people of one land go to another land, the people of other land might be afflicted with the plague. This was the precautionary isolation which, in today’s term, can be called quarantine.

Some people get confused with literal reading of a hadith which says, “There is no ‘adwa (transmission of infectious disease)” (Bukhari and Muslim). This hadith, in its context, actually means to guide the people that there is no contagion, no transmission of infectious disease without the permission of Allah Almighty, the Creator of the World. This does not mean that the contagion does not happen. Rather it means that the contagion does not have any effect without the permission God Almighty. As for the precautionary measure, on the part of human beings, it must be taken as guided in the ahadith mentioned above. In another hadith, the Prophet commanded the people, “Do not put a sick one with a healthy one”, that is, do not bring a sick camel to a healthy camel, lest the contagion be transmitted. Thus along with the faith that everything has its effect only after the God’s Will, the precautions must also be taken, because God Almighty says in the Quran, “Do not throw yourself into destruction” (2:195)   

As the contagious coronavirus is spreading rapidly around the world, outpacing our ability for testing let alone treatment, the best way of prevention is the precautionary isolation until Allah Almighty eliminates this torment. The World Health Organization, in this regard, is suggesting the good precautionary ways, much in the same way as was commanded by the Prophet 1400 years ago, to deal with such pandemic virus.

Such contagious diseases have repeatedly occurred in the human history. The causes might be different as per the medical experts, but the spiritual guides narrate that they come as a result of escalating oppression, religious persecutions and waywardness from the path of God Almighty. Therefore they guide the people to seek repentance, forgiveness, faith and spiritual reformation and ask for mercy of Allah Almighty.

Facing the contagious corona-virus, we the human slaves of Allah Almighty must adopt both ways; the spiritual guidance as well as the medically suggested precautions supported by the afore-mentioned Ahadith. Let’s start it at once, before it is too late!

A regular Columnist with NewAgeIslam.com, Ghulam Ghaus Siddiqi Dehlvi is an Alim and Fazil (Classical Islamic scholar), with a Sufi-Sunni background and English-Arabic-Urdu Translator. He has also done B.A (Hons.) in Arabic, M.A. in Arabic and M.A in English from JMI, New Delhi. He is Interested in Islamic Sciences; Theology, Jurisprudence, Tafsir, Hadith and Islamic mysticism (Tasawwuf).

URL: https://www.newageislam.com/islamic-ideology/coronavirus-outbreak--precautions-suggested-by-who-are-identical-with-islamic-prescriptions/d/121345

New Age IslamIslam OnlineIslamic WebsiteAfrican Muslim NewsArab World NewsSouth Asia NewsIndian Muslim NewsWorld Muslim NewsWomen in IslamIslamic FeminismArab WomenWomen In ArabIslamophobia in AmericaMuslim Women in WestIslam Women and Feminism


Compose your comments here

Total Comments (17)


Disclaimer: The opinions expressed in the articles and comments are the opinions of the authors and do not necessarily reflect that of NewAgeIslam.com

Total Comments (17)

  1. Let's pray for everything to be good and normal soon

    By Zakir 20/06/2020 11:01:01
  2. Muslims should not have supremacist thought that they are pious and safe from this virus. Rather they should worry about their own actions and reform their attitudes. 
    It is indeed our faults that we have failed so far to practice spiritual Islam.
    By GGS 01/04/2020 08:59:18
  3. It is shocking to read that some Muslims believe that Coronavirus has come to help the ughur Muslims in China, Indian Muslims From NCR, And Arab Muslims From America. 
    By Rashid 30/03/2020 06:14:26
  4. Some positive outcomes after the Coronavirus has come into existence to harm the people.
    *کرونا کے فاٸدے اسلامی نقطہ نظر سے*
    *مقبول احمد شہبازپوری ویشالوی*
    صدر÷ تنظیم آل بہار اٸمہ مساجد

    اللہ تعالی نے اگر زہر کو پیدا کیا تو اس میں (ایک خاص مقدار میں کھانے سے) شفاء بھی رکھا ہے.

    کرونا کی تباہ کاریوں سے انکار نہیں!
     لیکن کرونا کا ایک دوسرا رخ بھی ہے: 
    1. کرونا نےانسان کودوبارہ اس کی انسانیت کی طرف،
    اس کےخالق کی طرف،
     اور اس کےاخلاق کی طرف متوجہ کیاہے۔

    2. اس نے پوری دنیا میں تمام عیش وطرب کے مراکز بند کردیے ہیں،
    سینما گھر، نائٹ کلب، رقص گاہیں، شراب خانے،جواخانے اور جنسی بے راہ روی کےمراکز بند ہیں بلکہ سودکی شرح بھی کم کردی گئی ہے ۔

    3. اس نےخاندانوں کوایک طویل جدائی کے بعد ان کے گھروں میں دوبارہ اکٹھا کیا ہے۔

    4. اس نے اجنبی مرد اور عورت کو ایک دوسرے کو بوسا دینے سے بھی روکا جیساکہ کچھ ملک کارواج ہے

    5. اس نے عالمی ادارہ صحت کواس بات کے اعتراف پر مجبور کیا کہ شراب پینا تباہی ہے، لہذااس سے اجتناب کیاجائے۔

    6. اس نے صحت کے تمام اداروں کویہ بات کہنے پر مجبور کیا کہ درندے، شکاری پرندے، خون، مردار اور مریض جانور صحت کے لیے تباہ کن ہیں۔

    7. اس نے انسان کوسکھایا کہ چھینکنے کا طریقہ کیا ہے،
    صفائی کس طرح کی جاتی ہے جوہمیں ہمارے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے آج سے1450 سال پہلے بتایا ہے۔

    8. اس نےفوجی بجٹ کا ایک تہائی حصہ صحت کی طرف منتقل کیاہے۔

    9. اس نے دونوں جنسوں کے اختلاط کومذموم قراردیاہے۔

    10. اس نےدنیا کے بعض بڑے ممالک کے حکمرانوں کوبتادیا کہ لوگوں کوگھروں میں پابند کرنے، جبری بٹھانے اور ان کی آزادی چھین لینےکا معنی کیا ہوتے ہیں۔

    11. اس نے لوگوں کو اللہ سے دعا مانگنے ، گروزاری کرنے اوراستغفار کرنے پر مجبور اور منکرات اورگناہ چھوڑنے پر آمادہ کیاہے۔

    12. اس نے متکبرین کے کبر وغرور کا سر پھوڑدیا اور انہیں عام انسانوں کی طرح لباس پہنایا۔

    13. اس نے دنیامیں کارخانوں کی زہریلی گیس اوردیگر آلودگیوں کو کم کرنے کی طرف متوجہ کیا جن آلودگیوں نے باغات، جنگلات، دریا اور سمندروں کوگندہ کیا ہے۔

    14. اس نے ٹیکنالوجی کو رب ماننے والوں کودوبارہ حقیقی رب کی طرف متوجہ کیاہے۔

    15. اس نے حکمرانوں کوجیلوں اورقیدیوں کی حالت ٹھیک کرنے پرآمادہ کیاہے۔

    16. اورسب سے بڑا کارنامہ اس کا یہ ہے کہ اس نے انسانوں کو اللہﷻ کی وحدانیت کی طرف متوجہ کیا اور اللّہﷻ واسکے رسولﷺ کے بتاۓ راستے پہ چلنے پہ مجبور کیا

    آج عملی طورپریہ بات واضح ہوگئی کہ کس طرح بظاہر ایک وائرس لیکن حقیقت میں اللہ کا ایک سپاہی انسانیت کے لیے شر کے بجائے خیر کاباعث بن گیا۔
    تواے لوگو! کرونا وائرس پرلعنت مت بھیجو ! یہ تمہارے خیر کے لیے آیا ہے کہ اب ا نسانیت اس طرح نہ ہوگی جس طرح پہلے تھی۔۔

    ہمیں نقاب پہنّا آگیا، ہمیں وضو کا طریقہ آگیا، ہمیں صفائی کی سمجھ آگئی، شادی ہال بند ، سادگی سے شادی عقل میں آگیا، کولڈ ڈرنک، آئس شراب،جنک فوڈ، فضول خرچی سے بچنا وغیرہ وغیرہ سب سمجھ آگیا ،
    واہ رے کرونا.... جو علماء دین چیخ چیخ کے سمجھاتے رہے سمجھ نہ آیا ،
    قربان جاوں کرونا
    تونے کتنی جلدی اسلام سمجھا دیا۔۔
    By Maqbool Ahmad Shahbazpuri 30/03/2020 05:33:14
  5. 🌷  کچھ نہیں ہوگا ، انشاءاللہ 🌷

    ہمارے علاقے کے ایک شخص میں کرونا وائرس کی تشخیص ہوئی ، اسے کہا گیا:

    ان سب لوگوں کے نام بتاؤ جن سے تم نے ان دنوں ملاقات کی ہے ۔

    اس نے سب کے نام بتائے ،  ان سب کو  ہاسپٹل بلایا گیا اور ٹیسٹ لیے گئے ، لیکن .................. ان کے ٹیسٹ کلیئر آئے ، اور انھیں گھر بھیج دیا گیا ۔

    زیادہ نہیں ، تھوڑا سا ہی سوچ لیں کہ:

     اگر کرونا کے مریض کو ٹچ کرنے کی وجہ سے ہی بندہ مریض بن جاتا ہے ، تو اسے ٹچ کرنے والے یہ لوگ مریض کیوں نہیں بنے ؟؟

    یہ‌ الفاظ پھر پڑھیں:

    اگر کرونا کے مریض کو ٹچ کرنے کی وجہ سے ہی بندہ مریض بن جاتا ہے ، تو اسے ٹچ کرنے والے یہ لوگ مریض کیوں نہیں بنے ؟؟

    صرف یہی نہیں ، ایسے کئی ہزار افراد ہوں گے جنھوں نے لاعلمی میں کرونا زدگان  سے ملاقاتیں کیں ، ان کے ساتھ کھایا پیا ، اٹھے بیٹھے ؛ لیکن انھیں کچھ نہیں ہوا ۔

    آخر کیوں ؟؟

    اس سوال پر ٹھنڈے دل سے غور کریں !!

    سمجھ دار اس سوال پر غور کریں گے اور  دل سے خوف و وحشت  نکال کر پرسکون ہوجائیں گے ۔

    لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بے سمجھ ، خواہ مخواہ یہ مطلب  نکالیں گے کہ  میرے کہنے کا مقصد یہ ہے: " احتیاط نہ کریں  ۔ "

    آپ کو پیشگی بتادوں کہ میرے کہنے کایہ‌مقصد ہرگز نہیں !

    آپ ڈاکٹروں کی ہدایات کے مطابق پرہیز اور احتیاط ضرور کریں ، بس ................  " اپنا عقیدہ اور دماغ خراب نہ ہونے دیں ۔ "

    کرونا سمیت کوئی بھی بیماری حکمِ الہی کے بغیر نہیں لگ سکتی ۔
    کرونا سے جو لوگ متاثر نہیں ہوئے ، اللہ کے حکم سے نہیں ہوئے ؛ اور جو متاثر ہوئے ہیں ، اللہ‌ کے امر سے ہوئے ہیں ۔
    اور متاثرین میں بھی فوت ہونے والوں سے کئی گنا زیادہ تعداد ان لوگوں کی ہےجو   شفایاب ہوگئے ہیں ۔ الحمدللہ 

    اللہ کریم مرنے والے مسلمانوں کی مغفرت فرمائے اور بیماروں کو شفا دے ۔
    جو اس مرض میں مبتلا نہیں ہوئے ، انھیں محفوظ رکھے ؛ اور جو ذہنی طور پر اس مرض میں مبتلا ہوچکے ہیں ان کا  تقدیر پر ایمان مضبوط کرے ۔

    اللہ کے پیارے رسول ﷺ سچ فرماگئے:

    جو چیز ( تکلیف ، مصیبت وغیرہ ) تمھارے پاس آنے والی ہے وہ ٹل نہیں سکتی ، اور جو نہیں آنے والی ، وہ آ نہیں سکتی ۔

    ( سنن ابن ماجہ ، ر77 )  

    پریشان ہونا چھوڑ دیں ، خوش خوش رہیں اور دوسروں کو خوشیاں دیں ۔

    اللہ‌کریم آپ کو ہمیشہ ہنستا مسکراتا رکھے ۔

    مناسب سمجھیں تو ایک دفعہ مسکرا کے درود پاک پڑھ لیں !!

    اچھا ، مسکرانا اس طرح نہیں کہ آپ کی‌ مسکراہٹ بھی مرجھائی مرجھائی لگے ۔
    یوں مسکرائیں جیسے صبح کے وقت پھول کھلتے ہیں ۔
    By Luqman Shahid 30/03/2020 05:28:36