FOLLOW US:

Books and Documents
Urdu Section

Muslims Should Behave Rationally, Not Just Emotionally مسلمانوں کو صرف جذباتی نہیں بلکہ فکری رویہ اختیار کرنا چاہیے، نیو ایج اسلام فاؤنڈیشن کی تقریب میں مشہور پاکستانی مفکرمبارک حیدر کا اظہار خیال
Mobarak Haider, Intellectual, Thinker & Writer

جناب سلطان شاہین نے سامعین کے سامنے ان پاکستانی مسلم دانشوروں کی بہادری کو سراہا اور ان کی تعریف کی جو سچائی سے پردہ اٹھانے اور انتہا پسندوں کا سامنا کرنے کے لیے واقعی اپنی گردنوں کو تلوار کی دھار پر رکھ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ‘‘میرے خیال میں یہ اور بھی زیادہ قابل تعریف ہے اس لیے کہ اس جنگ میں ہندوستانی مسلم دانشوروں کی شمولیت بہت کم ہے’’۔ اپنی گفتگو کے دوران ڈاکٹر حیدر نے ان نفرت بھری کتابوں اور سید قطب، مولانا مودودی، ڈاکٹر اسرار اور ان جیسے انتہا پسندوں کی کتابوں کو بھی موضوع گفتگو بنایا جو پاکستان کے مدارس میں پڑھائی جا رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مولانا مودودی اور سید قطب جیسے سخت گیر مسلم علماء نے اسلام میں مذہبی انتہا پسندی، تفوق پرستی اور نرگسیت کے عناصر کو شامل کیا ہے جنہوں نے مسلمانوں سے اپنے نظریات کے بارے میں سوال نہ کرنے اور کسی بھی قسم کے محاسبہ اور تجزیہ کو نظرانداز کرنے کی تعلیم دی ہے۔ ڈاکٹر حیدر نے مزید کہا کہ "یہ نرگسیت کی بدترین شکل ہے"۔

انسان کی زندگی دواہم ترین عناصرسے بندھی ہو ئی ہے ایک حقوق،دوسراذمے داری۔ان دونوں کی ادائیگی کے بغیر زندگی شکووں، دوریوں،غلط فہمیوں،جھگڑوں،نفرتوں اورمنافرتوں کے کھنڈر میں تبدیل ہو جاتی ہے اورانسان اندرہی اندر سلگتا رہتا ہے ۔ ان دونوں یعنی حقوق کی ادائیگی اورذمے داری کی انجام دہی کے بغیرزندگی گزاری تو جاسکتی ہے مگرایسی زندگی کامقصدہی کیاجودکھ درد سے اس طرح لبریز ہو کہ ہلکاسا ایک جھٹکابھی انسان کو بکھیر کر رکھ دے ۔یہ عناصرزندگی کے دوپہیے ہوتے ہیں اور زندگی کے ٹریک کو اس خوش اسلوبی کے ساتھ آگے لے جاتے ہیں کہ انسانوں کوان کی منزل مقصودتک پہنچنے میں دشواری نہیں ہوتی ۔

 

A Disaster, We are Unable to See ایک ایسا عفریت جو ہمیں نظر نہیں آرہا
Mujahid Hussain, New Age Islam

تحریک طالبان کے ترجمان یہ پیغام دینا چاہتے ہیں کہ جنگ بندی کا خاتمہ حکومتی عدم دلچسپی اور اُن کے پیش کردہ مطالبات کو مکمل طور پر تسلیم نہ کیے جانے کا منطقی نتیجہ ہے۔جواب میں وفاقی وزیرداخلہ بھی اپنے معروضات پیش کرنے میں مصروف ہیں اور بہت حد تک اس وقت وہ اپنے موقف میں درست ہیں۔دیگر سیاسی و مذہبی جماعتیں اس حوالے سے تقریباً خاموش ہیں کیوں کہ صورت حال نازک ہوتی جارہی ہے اورقومی سلامتی کونسل کے اجلاس نے جہاں طالبان اور دیگر جنگجو گروہوں کو ایک صاف پیغام دیا ہے وہاں حکومت اور فوج کے درمیان کشیدگی کے خواہش مندوں کو بھی اسی طرح کا پیغام ملا ہے۔

 

Deviation of Thought An Important Reason of Terrorism فکری انحراف دہشت گردی کی ایک اہم وجہ ہے
Basil Hijazi, New Age Islam
لہذا دہشت گردی کے اسباب کی تلاش کا دائرہ کار چاہے جس قدر بھی وسیع کر لیا جائے فکری انحراف ہمیشہ پہلے نمبر پر رہے گا اور اس کا اثر سب سے غالب پایا جائے گا۔۔ یہ فکری مرض کسی بھی ماحول میں کئی شکلوں میں پیدا ہوسکتا ہے اور ہر اس شخص کو لاحق ہوسکتا ہے جو نفسیاتی اور ذہنی طور پر اس کے لیے تیار ہو، بات بس ماحول کے سازگار ہونے کی ہے۔۔ کہنے کا مقصد یہ ہے کہ دہشت گردی کو محض اور فقط اسلام سے منسوب کر دینا انتہائی متعصبانہ سوچ ہے بلکہ میں تو اسے عالمی میڈیا کی بے راہ روی ہی قرار دوں گا۔

 

 

علامہ اقبال نے اپنی کتاب "اسلام میں مذہبی نظریات کا احیائے نو" میں کہا کہ اسلام میں عقلی اور منطقی بنیادوں کی تلاش و جستجو کی ابتداء خود نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے سمجھا جا سکتا ہے۔ وہ مستقل طور پر یہ دعا فرمایا کرتے تھے: "ائےخدا! مجھے اشیاء کی حقیقت کا علم نافع عطا فرما!" ان تمام باتوں یہ امر بالکل واضح ہو گیا کہ ایمان کے گلیاروں میں علم کا کیا کردار ہے۔

 

Suicide Bombings, Beheadings Savagery وحشیانہ خود کش بم حملے اور قتل و غارت گری
Khaled Aljenfawi, Tr. New Age Islam

مثال کے طور پر چند اسلامی ثقافتوں میں ظلم و تشدد کی بنیادوں کو دوبارہ دریافت کرنا انتہائی ناگزیر ہوتا جا رہا ہے۔ سچا مسلم کبھی بھی نہ تو معصوم جانوں کی تباہی کو معاف کرتا ہے اور نہ ہی اس کی تائید کرتا ہے۔ لیکن اب ظلم و ستم کے فروغ کی وجہ قرآن کی غلط ترجمانی کو بتانا بہت آسان ہو چکا ہے۔ جب کہ قتل و غارت گری کے معاملے میں قرآن کا موقف انتہائی واضح ہے اور وہ یہ ہے ‘‘جس نے کسی شخص کو بغیر قصاص کے یا زمین میں فساد (پھیلانے یعنی خونریزی اور ڈاکہ زنی وغیرہ کی سزا) کے (بغیر ناحق) قتل کر دیا تو گویا اس نے (معاشرے کے) تمام لوگوں کو قتل کر ڈالا اور جس نے اسے (ناحق مرنے سے بچا کر) زندہ رکھا تو گویا اس نے (معاشرے کے) تمام لوگوں کو زندہ رکھا’’۔ (المائدہ 32)

 

War on Terror is not succeedingدہشت گردی کے خلاف جنگ نا کام ہو رہی ہے
Basil Hijazi, New Age Islam

ہم اس وقت ایک جدید دور میں جی رہے ہیں، آج کے حالات زمانہ قدیم کے حالات سے یکسر مختلف ہیں، جو اُس زمانے میں “حجۃ الاسلام”یا “خلیفہ”تھا اسے آج یہ سہولت میسر نہیں، خلفاء کے دور میں خلیفہ رعیت کی خبر لینے اور ان کا حال جاننے کے لیے ان کے درمیان گھومتا پھرتا تھا۔۔ یہ سادگی آج میسر نہیں، اور نا ہی دستیاب ہوسکتی ہے، شہروں کا پھیلاؤ جناتی ہوگیا ہے اور گھر کروڑوں میں، رابطوں کے ذرائع بھی بدل گئے ہیں تاہم لگتا ہے کہ نئے دور کے مفتیان کو یہ بات سمجھ نہیں آتی۔۔ یا وہ اسے ہضم نہیں کر پا رہے۔

 

Islam and Old Age Ethics اسلام اور ضعیفوں کے ساتھ حسن سلوک
Aiman Reyaz, New Age Islam

انسان واقعی بے وقوف ہے یا پھر وہ تکبر میں اندھا ہو گیا ہے؟ ہم نوجوان اور تندرست و توانا ہیں، ہم شاذ و نادر ہی غور و فکر کرتے ہیں، اس زندگی کے بعد آنے والی زندگی کو اور اس زندگی کے خاتمہ کو نظر انداز کرتے ہیں، جب ہم بوڑھے اور بے کار ہو جائیں گے، کہیں کونے میں پڑے ہوں گے، جب پریشانی کے عالم میں رات کے وقت کوئی تسلی دینے والا نہیں ہوگا، جب دن میں کوئی کھانا اور  پانی نہیں دیگا اور جب صبح سویرے ٹوائلٹ صاف کرنے میں بھی کوئی مدد کرنے والا نہیں ہوگا۔ ہم اتنے مصروف ہو گئے ہیں کہ ہم اس حقیقت سے مضحکہ خیز طور پر غافل ہو چکے ہیں کہ گھر میں ایک اور شخص بھی موجود ہے۔

 

To Wear or Not To Wear حجاب پہنیں یا نہ پہنیں؟
Amal Al-Sibai

ایک عورت نے یہ چیلنج پیش کیا کہ " کیا نقاب کو مسترد کرنا واقعی آزادی ہے؟ کیا ہائی ہیلس، شارٹ سکرٹ اور لپسٹک واقعی آزادی کی علامتیں ہیں؟ کیا لوگ واقعی یہ سمجھتے ہیں کہ شوہر اپنی بیوی کو نقاب پہننے کے لیے مجبور کرتے ہیں؟ میں نقاب پہنتی ہوں جبکہ ابھی میری شادی بھی نہیں ہوئی ہے۔ میں اللہ کو خوش کرنے کے لیے حجاب کا اہتمام کرتی ہوں اور میرا یہ ماننا ہے کہ حجاب کا اہتمام کرنے سے تقویٰ میں بڑھنے میں مدد ملتی ہے’’۔

 

Folly of God's Defence اللہ کے دفاع کی حماقت
Basil Hijazi, New Age Islam
میں یقین کے ساتھ کہہ سکتا ہوں کہ ان بے وقوف مذہب پرستوں خاص کر اسلام کے وڈے وڈے ٹھیکہ داروں کے مقابلے میں یہ ملحدین اللہ اور اس کی رحمت سے کہیں زیادہ قریب ہیں کہ بے وقوف دوست سے عقل مند دشمن کہیں زیادہ بہتر ہوتا ہے، اس قول کی سچائی اب حقیقی زندگی میں بھی نظر آنے لگی ہے، مؤمنین کے عمل اور مفتیانِ اسلام کے مضحکہ خیز فتاوی کی وجہ سے لاکھوں لوگ اللہ سے نفرت کرنے لگے ہیں اور ایمان کی راہ سے بھٹک رہے ہیں، وہ سیکولروں اور ہر اس شخص پر کفر کے فتوے لگا رہے ہیں جو ان کا مضحکہ خیز عقیدہ نہ رکھتا ہو حالانکہ سیکولر یا ملحد کو اس بات سے کوئی غرض نہیں ہوتی کہ آپ کا عقیدہ کیا ہے، وہ تو بس آپ سے یہ چاہتا ہے کہ آپ اس پر اور لوگوں پر اپنی رائے نہ تھوپیں تاکہ ان کی آزادی فکر کی حفاظت کی جاسکے جو اللہ بھی چاہتا ہے

 

 
Controversial Martyrdom شہادت متنازعہ
An Editorial of Monthly Sautul Haq

امیر جماعت اسلامی منور حسن صاحب کا انٹرویو آج کل موضوع بحث بنا ہوا ہے ۔ کیونکہ  انہوں نے فرمایا کہ امریکی مفادات کےلئے  ہمارا فوجی طالبان کے  ہاتھوں مارا جائے تو وہ شہید  نہیں ہے ۔  ان کے جواب سے ہلچل مچ گئی فوج بھی حرکت میں آگئی اور سیاست  دانوں  کو بھی موقع ہاتھ آیا کسی کا خیال  ہے ان پر مقدمہ چلایا جائے کوئی کہہ رہا ہے انہیں غدار قرار دیا جائے ۔ یہ کوئی بتا نہیں رہا ہے کہ شہادت ہے کیا؟  شہادت کا تاج منور حسن صاحب پہناتے ہیں یا یہ ڈیوٹی مولانا فضل الرحمان صاحب کی ہے کہ چاہے انسانوں کو پہنائیں یا کتے کو ۔

 

Misconceptions Associate Secularism with Atheism غلط فہمیوں کی وجہ سے سیکولرازم کو لادینیت سے موسوم کر دیا گیا
Khaled Aljenfawi

اسلامی اصول فقہ میں چند اصول ایسے بھی ہیں جن کی بنیاد پر سیکولر ازم کو بے حرمتی یا جو اسلام میں ‘‘ مقدس و معظم ہیں ان کی خلاف ورزی یا ان کا غلط استعمال’’ سمجھا جاتا ہے۔ در اصل لفظ سیکولر لاطینی زبان کے لفظ "saeculum" سے ماخوذ ہے جس کا مطلب ایک دور یا ایک نسل ہے۔ "سیکولر" ہونے کا مطلب "عام(civil)" ہونا ہے جس کا تعلق کسی مذہبی ادارے سے نہ ہو۔ اس کے علاوہ، سیکولر ازم سے مراد ‘‘اس دنیا سے متعلق یا موجودہ زندگی’’ بھی ہو سکتا ہے (ویبسٹر 1138)۔ بلا شبہ کوئی بھی یہ نہیں کہہ سکتا کہ سیکولر ازم دنیاوی اور دینی امور کے درمیان ایک راستہ ہے۔

 

Pakistan: Why This National Silence? یہ قومی گونگا پن کس لیے؟
Mujahid Hussain, New Age Islam

اگر طالبان ترجمان اور اُن کے دیگر ابلاغیاتی ذرائع کو بغور سنا جائے اور باریک بینی سے موجودہ حالات کا جائزہ لیا جائے تو یہ بات بالکل عیاں ہوتی ہے کہ حالیہ مذاکرات اور خاص طور پر طرز مذاکرات جنگجو گروہوں کے لیے ایک نئی زندگی لے کر آئی ہے جس میں نہ صرف اُن کے موقف کو ایک باقاعدہ تسلیم شدہ قوت کے موقف کا سا درجہ حاصل ہوا ہے بلکہ بعض اقدامات سے اُن کے حوصلے کئی منزلہ بلند ہوگئے ہیں اور وہ جس تیقن اور اعتماد کے ساتھ اپنے موقف کو پیش کرتے ہیں، اس سے پہلے وہ حوصلہ و طاقت اُنہیں میسر نہیں تھی ۔

 

The Forgotten Inheritance of Maulana Abul Kalam Azad مولانا ابوالکلام آزاد کی فراموش کرداہ وراثت
S. Irfan Habib

مولانا آزاد نے اپنی پوری زندگی اصل روح کے ساتھ قرآنی نصوص پر غور و فکر کرنے پر زور دیا جو کہ تمام مومنوں کو دستیاب تھے۔ انہوں نے روایت پسند اسلام قبول کرنے سے انکار کر دیا؛ اس کی بجائے انہوں نے ایمان کی تشریح و تعبیر کرنے کے لیے آزادانہ استدلال یا اجتہاد کی حمایت کی۔ انہوں نے قرآن مجید کو اس سے زیادہ پڑھنے سے خبردار بھی کیا کہ جتنا پہنچانا قرآن کا مقصد تھا۔ یہ عصر حاضر کے تناظر میں پیغمبرانہ نظریہ لگتاہے جہاں بہت سارے لوگ اسلام سے وہ بولنے کا مطالبہ کرتے ہیں جو وہ کتاب سے بلوانا چاہتے ہیں۔

 

….. ارتداد یا توہین رسالت کی سزا دینا صرف خدا کا کام ہے اور کسی کو بھی یہ حق حاصل نہیں ہے کہ مذہبی اختلافات کی وجہ سے وہ کسی مسلمان کو کافر کہے۔ انہیں یہ ماننا ہوگا کہ اپنا دفاع اور مذہب کا تحفظ ہی اسلام کی ابتدائی جنگوں کی ایک واحد دلیل تھی۔ انہیں یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ آج کی صورت حال مکمل طور پر مختلف ہے اس لیے کہ غیر مسلموں کی اکثریت والے ممالک مسلمانوں کو مکمل مذہبی آزادی فراہم کرتے ہیں۔

 

Is Ambiguity a Reward? ابہام ہی باعث ثواب ہے؟
Mujahid Hussain, New Age Islam

طالبان کے درمیان پھوٹ پڑنے والی جنگ کے بارے میں جتنی معلومات پاکستانی ذرائع ابلاغ سے موصول ہورہی ہیں اُن سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ لڑائی کی شدت غیر معمولی ہے اور طالبان کے درمیان جھگڑے کی اصل وجوہات اپنے اپنے زیر قبضہ علاقوں میں بھتہ وصولی ، پنجابی و پشتون طالبان چپقلش اورتاوان کے لیے اغواء ہوئے لوگوں کی ملکیت جیسے اُمور ہیں۔دوسری طرف مذاکراتی ٹیم کے ارکان کا یہ دعویٰ ہے کہ یہ معمولی نوعیت کا جھگڑا تھا جس کو احسن انداز میں نبٹا دیا گیا ہے اور اب مزید کوئی جھگڑا نہیں ہوگا۔

 

حضور آپ بھی کیا سوچتے ہوں گے کہ ایسی بھی کیا قیامت ٹوٹ پڑی ہے جو مجھ بد بخت کو آپ کے دورە کے دوران اپنی یہ فضول کی راگنی لے کر کودنا پڑا۔ تو میں بس اتنا بتانا چاہتا ہوں ہوں کہ آپ بالکُل بھی فکرمند نہ ہوں یہاں سب امن سُکھ چین اور شانتی کا دور دورە ہے۔ بس جعفر آباد کے ریلوے اسٹیشن پر کچھ بے بس مرد عورتیں اور بچے ایک ٹرین میں بیٹھے بیٹھے اُس وقت اچانک مارے گئے جب ایک چھوٹا موٹا معمولی سا بم پتہ نہیں کیوں پھٹ گیا۔

 

عیسائیوں میں مظلوم صنف  کو جس قدر پستی میں پھینکا جا سکتا تھا پھینک دیا ۔ چنانچہ  طر طولین ( مذہبی کلمات) کے مطابق عورتیں مجرم ہوتی ہیں ۔ وہ شیطان کا دروازہ ہیں ۔ عورتوں نے ہی خدا کے حسین تصویر یعنی مرد کو ضائع کیا ۔ سینٹ پال ( مذہبی رہنما ، پادری) کے مطابق عورت کو چپ چاپ مردو ں کی تابعداری کرنا چاہئے اور عورت معلم نہیں   ہوسکتی اور مرد پر حکم نہیں  چلا سکتی ۔ ایک دوسری جگہ ہی پادری فرماتے ہیں کہ عورت مر د کیلئے پیدا کی گئی ہے ناکہ مرد عورت کیلئے ۔ اس لئے عورت ہر حال میں محکوم ہے اور اسے محکوم ہی رہنا ہوگا ۔

 

ہمارے خیال میں محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی نبوت کو سند فراہم کرنے کے لئے ورقہ بن نوفل کی تصدیق  زیب  داستاں سے زیادہ نہیں ۔ اللہ نے نہیں بتایا جبرئیل  خاموش رہے حضور صلی اللہ علیہ وسلم بھی نہ سمجھے کہ نبوت ملی ہے تو اگر ورقہ بن نوفل اندھا بھی نہ بتاتا تو غالباً ساری  زندگی  حضور صلی اللہ علیہ وسلم نہ جان سکتے کہ وہ نبوت پر فائز ہوگئے ہیں؟ ۔ واقعہ نزول کے گرد ا ساطیری ماحول  کی تعمیر  میں ان روایتوں کا بھی بڑا دخل ہے جسے بعض سیرت  نگاروں نے بلا تحقیق  و تجزیہ اپنی تالیفات  میں جگہ دے دی اور جس نے گزرتے وقتوں کے ساتھ نقل در نقل  کے مرحلے  میں استناد کادرجہ حاصل کرلیا ہے ۔ ان روایتوں پر اگر اعتبار کر لیاجائے تو حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی نبوت نصرانیوں کی مرہون منت ہے ۔

 

The Collection of Qur’anic Verses into a Book Form: Perceptions and Reality تدوین قرآن کے متعلق عام رجحانات اور حقائق
Ghulam Rasool Dehlvi, New Age Islam

ایک ہوشمند اور باشعور مسلمان کے اندر ہمیشہ یہ علمی جستجو موجود ہونی چاہیے کہ اس کے مذہب کا بنیادی مصدر و ماخذ یعنی قرآن حکیم کی تدوین کس طرح عمل میں آئی اور کس طرح مسلمانوں نے اسے اپنے حافظہ میں محفوظ کیا۔ اب تک میں بھی انہی عام مسلمانوں کی ہی طرح قرآن پر ایمان رکھنے والا ایک مسلمان تھا جنہیں قرآن کی تاریخی صداقت کا ادنیٰ شعور بھی نہیں ہے اور وہ قرآن پر صرف اس مذہبی تقدس کی بنا پر ایمان رکھتے ہیں جو اس کے ساتھ مربوط ہے۔ لیکن میں پورے وثوق کے ساتھ یہ بات کہہ سکتا ہوں کہ یہ قرآن پر ایمان رکھنے کا قرآنی طریقہ نہیں ہے۔

 

Pakistan: A Decisive Crossroad فیصلہ کُن دوراہے پر کھڑی ریاست
Mujahid Hussain, New Age Islam

مذاکراتی ٹیم کے اہم رکن پروفیسر ابراہیم کے اس اعتراف کے بعد کہ مذاکرات ڈیڈ لاک کا شکار ہوگئے ہیں ،اب کوئی مزید ابہام باقی نہیں رہا اور ایسے لگ رہا ہے کہ مذاکرات کے اس انجام کی ذمہ داری فوج پر ڈالی جائے گی کیوں کہ حکومت کی طرف سے بے تحاشہ لچک اور طالبان کو فراہم کی جانے والی سہولیات کے پیش نظر یہ کہا جاسکتا ہے کہ طالبان اور اُن کے حامی فوج کو مورد الزام ٹھہرائیں گے۔لیکن سوال اس سے بھی اہم ہے کہ حکومت نے طالبان جنگجوؤں سے سوائے جزوی جنگ بندی کے مزید کیا حاصل کیا ہے؟

 

Pakistan: Growing Concerns About Punjab پنجاب کے بارے میں بڑھتے ہوئے خدشات
Mujahid Hussain, New Age Islam
طالبان حکومت مذاکرات پر تمام پہلووں سے لکھنے اور اُنہیں جانچنے کے لیے درکار معلومات اور مواد بہت کم ہے، اس کی وجہ وہ خود ساختہ ابہام ہے جو دوطرفہ فائدے کے لیے تیار کیا گیا ہے، کیوں کہ طالبان اور حکومت کی جانب سے کوئی نہیں چاہتا کہ وہ خسارے میں رہے۔ یہ ایک ایسی صورت حال ہے جو یہ ظاہر کرنے کے لیے کافی ہے کہ حکومت طالبان مذاکرات میں فریقین کی حیثیت حیران کن حد تک یکساں ہوچکی ہے کیوں کہ مطالبات کو تسلیم کیے جانے کا عمل حکومت کی طرف سے زیادہ وسیع القلب انداز اختیار کرتا جارہا ہے۔

 

Relationship of Religion and Ethics مذہب اور اخلاق کا تعلق
Basil Hijazi, New Age Islam

تاہم میرا خیال ہے کہ مذہب اور اخلاقیات میں ہم آہنگی بھی ہے اور تضاد بھی، یعنی کبھی مذہب اخلاق سے متحد ہوجاتا ہے اور کبھی دونوں میں تضاد پیدا ہوجاتا ہے، اگر ہم مذہب کو اس زاویہ نظر سے دیکھیں کہ یہ اللہ سے محب اور قلبی ایمان ہے اور بندے اور خدا کے آپسی تعلق کو بہتر کرنے کی کوشش ہے تو اس طرح مؤمن نہ صرف انا کی قید سے آزاد ہوجاتا ہے بلکہ خود پسندی اور ذاتی منفعت کی خواہش جاتی رہتی ہے، مذہب کا یہ مفہوم عین اخلاقی ہے، ظاہر ہے کہ اخلاق کا دائرہ کار ہمارے دوسروں کے ساتھ تعلق کے گرد ہی نہیں گھومتا بلکہ خدا کے گرد بھی گھومتا ہے

 

Timely Fatwa on Suicide Attack خودکش حملہ پر بروقت فتویٰ
S M Hali
سعودی عرب کے مفتی اعظم شیخ عبدالعزیز بن عبداللہ الشیخ نے ایک فتویٰ (مذہبی حکم) یہ صادر کیا ہے کہ خودکش حملے اسلام میں غیر قانونی اور ناجائز ہیں۔ مفتی اعظم نے خود کش بمباروں کو "جرائم پیشہ افراد" قرار دیا ہے جن کا ٹھکانہ "جہنم" ہے۔ فاضل مفتی نے کہا کہ خودکش حملے "عظیم جرائم" ہیں اور جو لوگ اس بھیانک عمل میں ملوث ہیں "وہ مجرم ہیں اور اپنے اس عمل کی بنیاد پر تیزی کے ساتھ جہنم کی طرف بڑھتے جا رہے ہیں"۔ شیخ نے خود کش حملہ آوروں کے بارے میں کہا کہ "ان کے ہوش  وحواس گم ہو گئے ہیں اور ان کا استعمال خود ان کو اور معاشروں کو تباہ کرنے کے لیے (ایک ہتھیار کے طور پر) کیا گیا ہے"۔

 

توبہ اور استغفار ضروری نہیں ہے کہ صرف گناہوں یا اللہ کی نافرمانی کے لیے ہی کیا جائے بلکہ ہمیں اپنی کوتاہیوں پر بھی توبہ اور استغفار کرنا چاہیے۔ جیسا کہ ہمیں اس بات کا احساس ہے کہ اللہ نے ہمیں اپنی بڑی نعمتوں اور فضل و کرم سے نوازا ہے اور اس کے لیے ہم اس کا جتنا بھی شکر ادا کریں اور اطاعت گزاری کریں وہ تمام واضح طور پر ناکافی ہیں۔ اللہ عز و جل کی ذات عظیم الشان ہے اور ہم یہ دیکھتے ہیں کہ اس کی شان کے اعتبار سے اس کے لیے ہماری تمام عبادتیں اور اطاعتیں واضح طور پر ناکافی ہیں۔ جو شخص تقویٰ اور خشیت الٰہی میں جتنا زیادہ ہےاس کے اندر اللہ کی عبادت اور اطاعت میں کوتاہی کا احساس اتنا ہی زیادہ ہے۔ اور اس کے نتیجے میں اس کی جانب سے استغفار کا عمل بھی  بڑھ جاتا ہے۔

 


Get New Age Islam in Your Inbox
E-mail:
Videos

The Reality of Pakistani Propaganda of Ghazwa e Hind and Composite Culture of IndiaPLAY 

Global Terrorism and Islam; M J Akbar provides The Indian PerspectivePLAY 

Shaukat Kashmiri speaks to New Age Islam TV on forced conversions to Islam in PakistanPLAY 

Petrodollar Islam, Salafi Islam, Wahhabi Islam in Pakistani SocietyPLAY 

NEW COMMENTS